Prof Arshad Javed Books In Urdu PDF Free Download
 

Forum.Noorclinic.com
Noor Clinic Pakistan Forum

 
Letter to Erfiwa
  Welcome : Guest
Login | Register | Rules
Noor Clinic| Forum | Health| Sex | General |Pakistani Matrimonial| Site Map
Procedure | Recent Post |New Topic | Most Viewed| Paigham e Quran and Hadees
  Ask A Doctor
Warning: This Website is not for people who are less than 16 years of age. Please Exit
 
Medical Forum Categories
Medical Discussion
Unmarried Boys Problems
Unmarried Girls Problem
Married Men Problem
Married Women Problem
Religion and Sex
Religion and Culture
Social Problem
General Health
Non Medical Discussion
Food & Recipes
Sports & Games
Politics
Urdu
Career and Success
Articles
Chatting
Suggestions
Women Health
Men Health
Junk and Spam
NoorClinic
Home(General)
Home(Health and Sex)
Forum Procedure
Noor Clinic Home
Baby Care
Daily Questions
  Start New Topic  My Profile
   

What Islam Says About Drinking Of Wife Milk?

Religion and Sex   >>  Breast Sucking
   
  Honolulu Hawaii Bar Dance Shows Urdu Safarnama
 
sincerecub Group: Members  Joined: 09th Apr, 2009  Topic: 3  Post: 32  Age:  34  
Posted on:9th Apr 2009, 2:20am
 

What Islam Says About Drinking Of Wife Milk?

Hi members, i joined the forum recently. Hope you all will help me in solving problems.

I joined this forum to discuss an important point to save one of my friend's married life which is reached to a "divorce" point.

Problem is that one friend married a female who has a religious mind. He loves her wife much and she also loves him much. They got married just 14 months ago. They have a child also.

My friend once drank her wife's breast milk. Her wife did not like this act. She discussed this with her close female friend. That her female friend told my friend's wife that due to this act (drinking own wife's breast milk), your NAKAH is no more !!!.

Now after this she is demanding divorce from my friend but my friend dont want to give her divorce. He is feeling shy to discuss this problem with any religious scholar.

I am posting this problem here to get solution according to ISLAM so that i can save their married life.

Please tell me that "IS IT TRUE THAT BY DRINKING OWN WIFE'S BREAST MILK, NAKAH IS ENDED? WHAT ISLAM SAYS ABOUT THIS? WHAT IS ITS CORRECT SOLUTION?"

Please help me in this noble cause. Coz kissi ki sulah karwana buhat barha sawab hai.

I am waiting for your answer according to ISLAM

May Allah give you easiness and give you strength to distribute easiness to others. Ameen.

 




mna1978 Group: Members  Joined: 27th Jan, 2009  Topic: 15  Post: 383  Age:  40  
Posted on:9th Apr 2009, 4:29am
 

NO!!!!

this act does not Ends teh nikah....

Mujy aik baat samaj nhi aa rahi.. agar aap kay dost ko apni wife say itna he peyar hai to woo is masly kay bary main itna shy keyoon hai... us ko chayee kay is masly ko kisi Aalim-e-din say pochy....

Wasy is say nikah end nhi hota!!!!

main nay aik web site par paraha hai... kay

Precaution should be taken that the milk of the wife does not enter the mouth. However, if the milk does enter the mouth this will not affect the nikah.

aur aik dosry par ya lekha hai

A husband can enjoy his wife as he wishes provided he avoids having intercourse during menses or in her anus. So, you may suck your wive's breasts. If the milk flows and you drink, this does not affect the marital relations. Only the suckling that takes place during the first two years is considered in Shari'a, according to the majority of Muslim scholars. The Prophet (Sallallahu Alaihi wa Sallam) said: "Suckling (that is considered) is only the one that is done for feeding from hunger" [Reported by Imams al-Bukhari and Muslim ].
It does not make any difference that a child also suckles from that milk or not.
However, it is better for a husband not to drink his wife's milk taking into consideration the opinion of those who believe that the suckling of a big person also establishes the relation of flesh and blood. This is the opinion of Ayisha (Radiya Allahu Anha), Ataa , Laith and
Ibn

~~HITMAN~~ Group: Members  Joined: 09th May, 2011  Topic: 122  Post: 4238  Age:  33  
Posted on:9th Apr 2009, 8:12am
 

rE:

"sucking the wife's breast, as far as Islam is concerned, does not render her unlawful for the husband."


Source :  http://www.islamonline.net/servlet/Satellite?pagename=IslamOnline-English-Ask_Scholar/FatwaE/FatwaE&cid=1119503544374
Seemi Group: Members  Joined: 11th Sep, 2007  Topic: 14  Post: 3812  Age:  32  
Posted on:9th Apr 2009, 11:23pm
 

Nikah

Nikah sirf do soratoon mein khatam hota hai. Aik mard khod divoce de de ya aurat kula le le Ya mard ya aurat mein se koi murtid ho jaye. Murtid mard ya aurat k saath momin ya momina ka nikah barqaraar nahin rehta.

Baqi jo bhi hai, woh Islamic point of view se haram ya makrooh to ho sakta hai lekin is se nikah per koi farq nahi parta. Nikah koi seeshay ka glass nahin k aisay hi toot jaye.




goodman Group: Members  Joined: 11th Oct, 2007  Topic: 66  Post: 7815  Age:  37  
Blocked
Posted on:9th Apr 2009, 11:29pm
 

ok

agree with seemi .........

ap ke dost ka Nikah nahi toota.......usnay aik Makrooh amal kiya ha......uska kafara ada keray..........aur yeah itna bara mamla nahi howa kay mamla talaq tak pohnch jain........

mna1978 Group: Members  Joined: 27th Jan, 2009  Topic: 15  Post: 383  Age:  40  
Posted on:9th Apr 2009, 12:20pm
 

seemi very nice

sister aap nay bohat ke comprehensive jawab deya hai... great!!! :)
sincerecub Group: Members  Joined: 09th Apr, 2009  Topic: 3  Post: 32  Age:  34  
Posted on:10th Apr 2009, 2:42am
 

Thanx brothers n sisters

Thanks to all for participating and thinking on my question. It provide enough knowledge about the point asked.

Specially very much thanx to Seemi & mna 1978 for answering with references and in detail. Hope it will help my friend.

Next question is that Goodman said that wo kafara ada karay. do all you think that is ka kafara hona chahiay? if yes then kia kafara ada karay wo? if any one know about that please tell me. If possible give refernce of some Hadith or Qurani verse.

May Allah give you all, easiness and give you strength to distribute easiness to others. Ameen.

goodman Group: Members  Joined: 11th Oct, 2007  Topic: 66  Post: 7815  Age:  37  
Blocked
Posted on:10th Apr 2009, 3:38am
 

ok

kafara may app kay dost kee bewi aur uska husaband Allah say mafi mangay ....aur Kooi khair Kharat ghareeb bachoo may bantay........Mustand kafaray kay liyay Alamay deen say Rajoo karay..........
rafaz Group: Members  Joined: 14th Mar, 2007  Topic: 20  Post: 941  Age:   
Posted on:10th Apr 2009, 3:40am
 

NO NEED OF KUFFARA

There is no need of any kuffara when there is a husband drink his wife milk , in any condition wife milk is makrooh if any husband take in his stomach there is no problem but avoid to do this act because this milk is for child
goodman Group: Members  Joined: 11th Oct, 2007  Topic: 66  Post: 7815  Age:  37  
Blocked
Posted on:10th Apr 2009, 3:51am
 

a question?

mara aik question ha kiya aik makrooh kam ker kay us say Allah say mafi nahi magni chahay........aur yahi aik Kafara ha..........

Jab Roozay kee halat may insan kooi makrooh cheez khata ha too pher roozay ka kafara ada kiya jata ha kay nahi...........pls explain me.........

rafaz Group: Members  Joined: 14th Mar, 2007  Topic: 20  Post: 941  Age:   
Posted on:10th Apr 2009, 9:45am
 

DIFFERENT B/W MAKHROO AND HARAM

There is a difference b/w makhroo and haram things . Haram kam jo ha who totally mana ha leken makhroo jo amal ha wo ho sakta ha k kisi ko napasand ho leken wo haram neehe ha is lyee us ka koi kuffara bhee neehe ha
goodman Group: Members  Joined: 11th Oct, 2007  Topic: 66  Post: 7815  Age:  37  
Blocked
Posted on:10th Apr 2009, 10:10am
 

ok

Makrooh amal agar jan booj ker kiya jain aur pher baad may Allah say maffi bee na mangi jain to pher uska kiya solution ha???

agar kissi kay pass QURAN AUR SUNNAH kee roshni may is swal ka jawab ha to pls mujay guide keray..............

rafaz Group: Members  Joined: 14th Mar, 2007  Topic: 20  Post: 941  Age:   
Posted on:10th Apr 2009, 4:51pm
 

MAFI

Mafi to ALLAH TALLA say her waqt her gari magni chahyee
Kuch cheesey easeey hoteey heen jesay k kuch ulma kehtey heen k prawn(jinga) khana makrooh ha leken kitney he log kha rahey hotey heen wo to khaney k bad koi kuffara ada neehen kertey ,makrooh means koi emal ya koi chees kisi ko pasand neehe ho sakti ha leken mana neehe
snnifer Group: Members  Joined: 07th Apr, 2009  Topic: 6  Post: 36  Age:  30  
Posted on:10th Apr 2009, 4:59pm
 

nikah


جواب:

الحمدللہ

سوال کا جواب دینے سے قبل رضاعت کے احکام بیان کرنا ضروری ہیں :

1 - یقینا کتاب وسنت اور اجماع سے رضاعت کا ثبوت ملتا ہے ۔

کتاب اللہ میں سے دلائل :

اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :

{ اورتمہاری وہ مائیں جنہوں نے تمہیں دودھ پلایا ہے ، اور تمہاری دودھ شریک بہنیں } النساء ( 23 )

سنت نبویہ میں بھی اس کی دلیل ملتی ہے :

ابن عباس رضی اللہ تعالی عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

( رضاعت سے بھی وہی ( رشتہ ) حرام ہے جو کہ نسب سے حرام ہوتا ہے ) صحیح بخاری وصحیح مسلم ( 1444 ) ۔

اوراجماع کی دلیل یہ ہے کہ :

علماء کرام کا اس پر اجماع ہے کہ رضاعت کی وجہ سے نکاح کی حرمت اوراسی طرح محرم اورخلوت ، ثابت ہوجاتی ہے اوردیکھنا بھی جائز ہوجاتا ہے ۔

2 - رضاعت کے موثر ہونے کی کچھ شروط ہیں :

- کہ رضاعت دوسال کے دوران ہو اس لیے کہ اللہ تعالی کافرمان ہے :

{ اورمائيں اپنی اولاد کوپورے دوبرس دودھ پلائيں ، یہ اس کے لیے ہے جومدت رضاعت پوری کرنا چاہے } البقرۃ ( 233 ) ۔

- یہ رضاعت کی تعداد پانچ ہو یعنی بچہ پانج بار اپنی خوراک پوری کرے ، جس طرح کھانے میں ایک کھانا یا پھر پینے میں سے ایک پینا ہوتا ہے اسی طرح بچے کی بھی خوراک ہے جووہ پانچ پوری کرے یعنی دوسرے الفاظ میں کہ وہ ایک بار ماں کا دودھ اپنے منہ میں ڈالے اورپھر پینے کے بعد خود ہی باہر نکالے ، تواس طرح پانچ بار ہونا چاہیے ۔

لیکن بچہ اگر سانس لینے یا پھر ایک کو چھوڑ کر دوسرے کومنہ میں ڈالنے کے لیے نکالے تواسے ایک بار رضاعت شمار نہیں کیا جائے گا ۔

امام شافعی رحمہ اللہ کا یہی مسلک ہے اورحافظ ابن قیم رحمہ اللہ تعالی نے بھی اسے ہی اختیار کیا ہے ۔

رضعہ کی تعریف یہ ہے کہ : بچہ ایک باردودھ منہ میں ڈال کرچوسے حتی کہ وہ اس کے پیٹ میں جائے اوربچہ خود ہی اسے چھوڑ دے تویہ ایک ر‏ضعہ شمار ہوگا ۔

پانچ ر‏ضعات کی دلیل میں مندرجہ ذيل حدیث پیش کی جاتی ہے :

عائشہ رضي اللہ تعالی عنہا بیان کرتی ہیں کہ : قرآن مجید میں دس معلوم رضعات کا نزول ہوا تھا جن سے حرمت ثابت ہوتی تھی لیکن بعد میں انہیں پانچ رضعات کے ساتھ منسوخ کردیا گیا ، اورنبی صلی اللہ علیہ وسلم کے وفات کے وقت بھی یہ پڑھی جاتی تھیں ۔ صحیح مسلم حدیث نمبر ( 1452 ) ۔

یعنی بہت ہی دیر بعد اس کی تلاوت منسوخ کردی گئي حتی کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم وفات پاگئے ، اورکچھ لوگوں کواس کے منسوخ ہونے کی خبر نہ مل سکی ، جب اس کی تلاوت کا منسوخ ہونے کا انہیں بھی علم ہوا توانہوں نے بھی اسے ترک کردیا اورسب کا اس پر اتفاق ہوا کہ تلاوت منسوخ ہے اورحکم باقی رکھا گيا ہے ، یعنی حکم کے بغیر صرف تلاوت ہی منسوخ ہے ، یہ بھی نسخ کی اقسام میں سے ایک قسم ہے ۔

جب یہ ثابت ہوگيا تو اس سے یہ پتہ چلا کہ دوسال کے بعد رضاعت ثابت نہیں ہوگي جس سے حرمت ثابت ہوسکے ۔

جمہور علماء کرام کا مسلک یہی ہے ، ان کے دلائل میں مندرجہ بالا آیت اورنبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان بھی ہے :

( اس رضاعت سے حرمت ثابت ہوتی ہے جس سے انتڑیاں بھرجائیں اوردودھ چھڑانے کی مدت سے قبل ہو ) سنن ترمذی حدیث نمبر ( 1152 ) ترمذی رحمہ اللہ تعالی نے اسے حسن صحیح کہا ہے ۔

اوراکثراہل علم کے اورصحابہ کرام وغیرہ کا بھی عمل بھی اسی پر ہے کہ حرمت اسی رضاعت سے ثابت ہوتی ہے جودوسال سے کم عمر میں ہو اوردوبرس کی عمر کے بعد حرمت ثابت نہیں ہوتی ۔ ا ھـ

اس پر صحابہ کرام سے بھی آثار موجود ہیں :

ابوعطیہ وداعی رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں کہ ایک آدمی عبداللہ بن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما کے پاس آیا اورکہنے لگا : میرے ساتھ میری بیوی تھی اس کا دودھ اس کے پستانوں میں رک گيا تومیں نے اسے چوس کرپھینکنا شروع کردیا ، بعد میں ابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کے پاس گيا ، ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما نے کہا انہوں نے کیا فتوی دیا ؟

اس شخص نے ان کا فتوی بیان کیا ابن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما نے اس آدمی کا ہاتھ پکڑا اورابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کوکہنے لگے کیا آپ اسے دودھ پیتا بچہ سمجھ رہے ہیں ؟ رضاعت تو وہ ہے جس سے خون اورگوشت بنے ، توابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کہنے لگے جب تک آپ لوگوں میں یہ حبرالامہ ابن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما موجود ہیں مجھ سے کسی بھی چيز کے بارہ میں نہ پوچھو ۔ مصنف عبدالرزاق ( 7 / 463 ) حدیث نمبر ( 1389 ) ۔

اور امام مالک نے بھی موطا میں ( 2 / 603 ) میں ابن عمررضي اللہ تعالی عنہما سے روایت کیا ہے کہ :

رضاعت تو اس کے لیے ہے جس نے بچپن میں دودھ پلایا اوربڑے کی رضاعت نہیں ۔ اس کی سند صحیح ہے ۔

عبداللہ بن دینار رحمہ اللہ تعالی بیان کرتےہیں کہ ایک شخص عبداللہ بن عمر رضي اللہ تعالی عنہما کے پاس آیا اورمیں بھی ان کے ساتھ تھا وہ دار قضاء کے پاس آئے اوربڑے شخص کی رضاعت کےبارہ میں سوال کرنے لگے ؟

توعبداللہ بن عمر رضي اللہ تعالی عنہما کہنے لگے کہ ایک شخص عمربن خطاب رضي اللہ تعالی عنہ کے پاس آکرکہنے لگا میری ایک لونڈی تھی جس سے میں وطئی کیا کرتا تھا میری بیوی نے اسے دودھ پلادیا ، میں جب میں اس کے پاس جانے لگا تومیری بیوی کہنے لگی اس سے دور رہو ، اللہ کی قسم میں نے اسے دودھ پلادیا ہے

عمررضي اللہ تعالی عنہ کہنے لگے اسے سزا دو اوراپنی لونڈی کے پاس جاؤ اس لیے کہ رضاعت توبچے کی ہے ۔ موطا امام مالک ، اس کی سند صحیح ہے ۔

تو اس سے یہ ثابت ہوا کہ بیوی کا دودھ چوسنے سے حرمت ثابت نہیں ہوتی ، اس کا کچھ بھی اثر نہیں ۔

ابن قدامہ رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں :

تحریم رضاعت میں یہ شرط ہے کہ وہ دوسال میں ہو ، اکثر اہل علم کا یہی قول ہے ، اوراسی طرح عمر ، علی ، ابن عمر ، ابن مسعود ، ابن عباس ، اورابوھریرہ رضي اللہ تعالی عنہم اورازواج مطہرات سے بھی روایت ہے صرف عائشہ رضي اللہ تعالی سے یہ ثابت نہیں ۔

امام شعبی ، ابن شبرمہ ، اوزاعی، امام شافعی ، اسحاق ، ابویوسف ، محمد ، ابوثور ، بھی اسی کے قائل ہیں اورامام مالک کی ایک روایت بھی اسی طرح کی ہے ۔

تو اس بنا پر بیوی کا دودھ چوسنا کوئي اثرانداز نہیں ہوتا اگرچہ اس کا ترک کرنا ہی اولی ہے ۔

شیخ محمد بن صالح عثیمین رحمہ اللہ تعالی سےاس مسئلہ کے بارہ میں پوچھا گیا توان کا جواب تھا :

بڑے کی رضاعت موثر نہیں ، اس لیے کہ رضاعت وہ موثر ہے جوپانچ یااس سے زائد رضعات ہو اور ہو بھی دو برس کی عمر تک دودھ چھڑانے سے قبل ، تواس بنا پر ہم اگرکوئي اپنی بیوی کا دودھ چوستا ہے یا پھر وہ پیتا ہے تواس کا بیٹا نہیں بنے گا ۔

دیکھیں فتاوی اسلامیۃ ( 3 / 338 ) ۔

واللہ اعلم .



شیخ محمد صالح المنجد


snnifer Group: Members  Joined: 07th Apr, 2009  Topic: 6  Post: 36  Age:  30  
Posted on:10th Apr 2009, 5:02pm
 

nikah


جواب:

الحمدللہ

سوال کا جواب دینے سے قبل رضاعت کے احکام بیان کرنا ضروری ہیں :

1 - یقینا کتاب وسنت اور اجماع سے رضاعت کا ثبوت ملتا ہے ۔

کتاب اللہ میں سے دلائل :

اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :

{ اورتمہاری وہ مائیں جنہوں نے تمہیں دودھ پلایا ہے ، اور تمہاری دودھ شریک بہنیں } النساء ( 23 )

سنت نبویہ میں بھی اس کی دلیل ملتی ہے :

ابن عباس رضی اللہ تعالی عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

( رضاعت سے بھی وہی ( رشتہ ) حرام ہے جو کہ نسب سے حرام ہوتا ہے ) صحیح بخاری وصحیح مسلم ( 1444 ) ۔

اوراجماع کی دلیل یہ ہے کہ :

علماء کرام کا اس پر اجماع ہے کہ رضاعت کی وجہ سے نکاح کی حرمت اوراسی طرح محرم اورخلوت ، ثابت ہوجاتی ہے اوردیکھنا بھی جائز ہوجاتا ہے ۔

2 - رضاعت کے موثر ہونے کی کچھ شروط ہیں :

- کہ رضاعت دوسال کے دوران ہو اس لیے کہ اللہ تعالی کافرمان ہے :

{ اورمائيں اپنی اولاد کوپورے دوبرس دودھ پلائيں ، یہ اس کے لیے ہے جومدت رضاعت پوری کرنا چاہے } البقرۃ ( 233 ) ۔

- یہ رضاعت کی تعداد پانچ ہو یعنی بچہ پانج بار اپنی خوراک پوری کرے ، جس طرح کھانے میں ایک کھانا یا پھر پینے میں سے ایک پینا ہوتا ہے اسی طرح بچے کی بھی خوراک ہے جووہ پانچ پوری کرے یعنی دوسرے الفاظ میں کہ وہ ایک بار ماں کا دودھ اپنے منہ میں ڈالے اورپھر پینے کے بعد خود ہی باہر نکالے ، تواس طرح پانچ بار ہونا چاہیے ۔

لیکن بچہ اگر سانس لینے یا پھر ایک کو چھوڑ کر دوسرے کومنہ میں ڈالنے کے لیے نکالے تواسے ایک بار رضاعت شمار نہیں کیا جائے گا ۔

امام شافعی رحمہ اللہ کا یہی مسلک ہے اورحافظ ابن قیم رحمہ اللہ تعالی نے بھی اسے ہی اختیار کیا ہے ۔

رضعہ کی تعریف یہ ہے کہ : بچہ ایک باردودھ منہ میں ڈال کرچوسے حتی کہ وہ اس کے پیٹ میں جائے اوربچہ خود ہی اسے چھوڑ دے تویہ ایک ر‏ضعہ شمار ہوگا ۔

پانچ ر‏ضعات کی دلیل میں مندرجہ ذيل حدیث پیش کی جاتی ہے :

عائشہ رضي اللہ تعالی عنہا بیان کرتی ہیں کہ : قرآن مجید میں دس معلوم رضعات کا نزول ہوا تھا جن سے حرمت ثابت ہوتی تھی لیکن بعد میں انہیں پانچ رضعات کے ساتھ منسوخ کردیا گیا ، اورنبی صلی اللہ علیہ وسلم کے وفات کے وقت بھی یہ پڑھی جاتی تھیں ۔ صحیح مسلم حدیث نمبر ( 1452 ) ۔

یعنی بہت ہی دیر بعد اس کی تلاوت منسوخ کردی گئي حتی کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم وفات پاگئے ، اورکچھ لوگوں کواس کے منسوخ ہونے کی خبر نہ مل سکی ، جب اس کی تلاوت کا منسوخ ہونے کا انہیں بھی علم ہوا توانہوں نے بھی اسے ترک کردیا اورسب کا اس پر اتفاق ہوا کہ تلاوت منسوخ ہے اورحکم باقی رکھا گيا ہے ، یعنی حکم کے بغیر صرف تلاوت ہی منسوخ ہے ، یہ بھی نسخ کی اقسام میں سے ایک قسم ہے ۔

جب یہ ثابت ہوگيا تو اس سے یہ پتہ چلا کہ دوسال کے بعد رضاعت ثابت نہیں ہوگي جس سے حرمت ثابت ہوسکے ۔

جمہور علماء کرام کا مسلک یہی ہے ، ان کے دلائل میں مندرجہ بالا آیت اورنبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان بھی ہے :

( اس رضاعت سے حرمت ثابت ہوتی ہے جس سے انتڑیاں بھرجائیں اوردودھ چھڑانے کی مدت سے قبل ہو ) سنن ترمذی حدیث نمبر ( 1152 ) ترمذی رحمہ اللہ تعالی نے اسے حسن صحیح کہا ہے ۔

اوراکثراہل علم کے اورصحابہ کرام وغیرہ کا بھی عمل بھی اسی پر ہے کہ حرمت اسی رضاعت سے ثابت ہوتی ہے جودوسال سے کم عمر میں ہو اوردوبرس کی عمر کے بعد حرمت ثابت نہیں ہوتی ۔ ا ھـ

اس پر صحابہ کرام سے بھی آثار موجود ہیں :

ابوعطیہ وداعی رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں کہ ایک آدمی عبداللہ بن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما کے پاس آیا اورکہنے لگا : میرے ساتھ میری بیوی تھی اس کا دودھ اس کے پستانوں میں رک گيا تومیں نے اسے چوس کرپھینکنا شروع کردیا ، بعد میں ابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کے پاس گيا ، ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما نے کہا انہوں نے کیا فتوی دیا ؟

اس شخص نے ان کا فتوی بیان کیا ابن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما نے اس آدمی کا ہاتھ پکڑا اورابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کوکہنے لگے کیا آپ اسے دودھ پیتا بچہ سمجھ رہے ہیں ؟ رضاعت تو وہ ہے جس سے خون اورگوشت بنے ، توابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کہنے لگے جب تک آپ لوگوں میں یہ حبرالامہ ابن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما موجود ہیں مجھ سے کسی بھی چيز کے بارہ میں نہ پوچھو ۔ مصنف عبدالرزاق ( 7 / 463 ) حدیث نمبر ( 1389 ) ۔

اور امام مالک نے بھی موطا میں ( 2 / 603 ) میں ابن عمررضي اللہ تعالی عنہما سے روایت کیا ہے کہ :

رضاعت تو اس کے لیے ہے جس نے بچپن میں دودھ پلایا اوربڑے کی رضاعت نہیں ۔ اس کی سند صحیح ہے ۔

عبداللہ بن دینار رحمہ اللہ تعالی بیان کرتےہیں کہ ایک شخص عبداللہ بن عمر رضي اللہ تعالی عنہما کے پاس آیا اورمیں بھی ان کے ساتھ تھا وہ دار قضاء کے پاس آئے اوربڑے شخص کی رضاعت کےبارہ میں سوال کرنے لگے ؟

توعبداللہ بن عمر رضي اللہ تعالی عنہما کہنے لگے کہ ایک شخص عمربن خطاب رضي اللہ تعالی عنہ کے پاس آکرکہنے لگا میری ایک لونڈی تھی جس سے میں وطئی کیا کرتا تھا میری بیوی نے اسے دودھ پلادیا ، میں جب میں اس کے پاس جانے لگا تومیری بیوی کہنے لگی اس سے دور رہو ، اللہ کی قسم میں نے اسے دودھ پلادیا ہے

عمررضي اللہ تعالی عنہ کہنے لگے اسے سزا دو اوراپنی لونڈی کے پاس جاؤ اس لیے کہ رضاعت توبچے کی ہے ۔ موطا امام مالک ، اس کی سند صحیح ہے ۔

تو اس سے یہ ثابت ہوا کہ بیوی کا دودھ چوسنے سے حرمت ثابت نہیں ہوتی ، اس کا کچھ بھی اثر نہیں ۔

ابن قدامہ رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں :

تحریم رضاعت میں یہ شرط ہے کہ وہ دوسال میں ہو ، اکثر اہل علم کا یہی قول ہے ، اوراسی طرح عمر ، علی ، ابن عمر ، ابن مسعود ، ابن عباس ، اورابوھریرہ رضي اللہ تعالی عنہم اورازواج مطہرات سے بھی روایت ہے صرف عائشہ رضي اللہ تعالی سے یہ ثابت نہیں ۔

امام شعبی ، ابن شبرمہ ، اوزاعی، امام شافعی ، اسحاق ، ابویوسف ، محمد ، ابوثور ، بھی اسی کے قائل ہیں اورامام مالک کی ایک روایت بھی اسی طرح کی ہے ۔

تو اس بنا پر بیوی کا دودھ چوسنا کوئي اثرانداز نہیں ہوتا اگرچہ اس کا ترک کرنا ہی اولی ہے ۔

شیخ محمد بن صالح عثیمین رحمہ اللہ تعالی سےاس مسئلہ کے بارہ میں پوچھا گیا توان کا جواب تھا :

بڑے کی رضاعت موثر نہیں ، اس لیے کہ رضاعت وہ موثر ہے جوپانچ یااس سے زائد رضعات ہو اور ہو بھی دو برس کی عمر تک دودھ چھڑانے سے قبل ، تواس بنا پر ہم اگرکوئي اپنی بیوی کا دودھ چوستا ہے یا پھر وہ پیتا ہے تواس کا بیٹا نہیں بنے گا ۔

دیکھیں فتاوی اسلامیۃ ( 3 / 338 ) ۔

واللہ اعلم .



شیخ محمد صالح المنجد


snnifer Group: Members  Joined: 07th Apr, 2009  Topic: 6  Post: 36  Age:  30  
Posted on:10th Apr 2009, 5:04pm
 

nikah nae tota


جواب:

الحمدللہ

سوال کا جواب دینے سے قبل رضاعت کے احکام بیان کرنا ضروری ہیں :

1 - یقینا کتاب وسنت اور اجماع سے رضاعت کا ثبوت ملتا ہے ۔

کتاب اللہ میں سے دلائل :

اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :

{ اورتمہاری وہ مائیں جنہوں نے تمہیں دودھ پلایا ہے ، اور تمہاری دودھ شریک بہنیں } النساء ( 23 )

سنت نبویہ میں بھی اس کی دلیل ملتی ہے :

ابن عباس رضی اللہ تعالی عنہما بیان کرتے ہیں کہ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

( رضاعت سے بھی وہی ( رشتہ ) حرام ہے جو کہ نسب سے حرام ہوتا ہے ) صحیح بخاری وصحیح مسلم ( 1444 ) ۔

اوراجماع کی دلیل یہ ہے کہ :

علماء کرام کا اس پر اجماع ہے کہ رضاعت کی وجہ سے نکاح کی حرمت اوراسی طرح محرم اورخلوت ، ثابت ہوجاتی ہے اوردیکھنا بھی جائز ہوجاتا ہے ۔

2 - رضاعت کے موثر ہونے کی کچھ شروط ہیں :

- کہ رضاعت دوسال کے دوران ہو اس لیے کہ اللہ تعالی کافرمان ہے :

{ اورمائيں اپنی اولاد کوپورے دوبرس دودھ پلائيں ، یہ اس کے لیے ہے جومدت رضاعت پوری کرنا چاہے } البقرۃ ( 233 ) ۔

- یہ رضاعت کی تعداد پانچ ہو یعنی بچہ پانج بار اپنی خوراک پوری کرے ، جس طرح کھانے میں ایک کھانا یا پھر پینے میں سے ایک پینا ہوتا ہے اسی طرح بچے کی بھی خوراک ہے جووہ پانچ پوری کرے یعنی دوسرے الفاظ میں کہ وہ ایک بار ماں کا دودھ اپنے منہ میں ڈالے اورپھر پینے کے بعد خود ہی باہر نکالے ، تواس طرح پانچ بار ہونا چاہیے ۔

لیکن بچہ اگر سانس لینے یا پھر ایک کو چھوڑ کر دوسرے کومنہ میں ڈالنے کے لیے نکالے تواسے ایک بار رضاعت شمار نہیں کیا جائے گا ۔

امام شافعی رحمہ اللہ کا یہی مسلک ہے اورحافظ ابن قیم رحمہ اللہ تعالی نے بھی اسے ہی اختیار کیا ہے ۔

رضعہ کی تعریف یہ ہے کہ : بچہ ایک باردودھ منہ میں ڈال کرچوسے حتی کہ وہ اس کے پیٹ میں جائے اوربچہ خود ہی اسے چھوڑ دے تویہ ایک ر‏ضعہ شمار ہوگا ۔

پانچ ر‏ضعات کی دلیل میں مندرجہ ذيل حدیث پیش کی جاتی ہے :

عائشہ رضي اللہ تعالی عنہا بیان کرتی ہیں کہ : قرآن مجید میں دس معلوم رضعات کا نزول ہوا تھا جن سے حرمت ثابت ہوتی تھی لیکن بعد میں انہیں پانچ رضعات کے ساتھ منسوخ کردیا گیا ، اورنبی صلی اللہ علیہ وسلم کے وفات کے وقت بھی یہ پڑھی جاتی تھیں ۔ صحیح مسلم حدیث نمبر ( 1452 ) ۔

یعنی بہت ہی دیر بعد اس کی تلاوت منسوخ کردی گئي حتی کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم وفات پاگئے ، اورکچھ لوگوں کواس کے منسوخ ہونے کی خبر نہ مل سکی ، جب اس کی تلاوت کا منسوخ ہونے کا انہیں بھی علم ہوا توانہوں نے بھی اسے ترک کردیا اورسب کا اس پر اتفاق ہوا کہ تلاوت منسوخ ہے اورحکم باقی رکھا گيا ہے ، یعنی حکم کے بغیر صرف تلاوت ہی منسوخ ہے ، یہ بھی نسخ کی اقسام میں سے ایک قسم ہے ۔

جب یہ ثابت ہوگيا تو اس سے یہ پتہ چلا کہ دوسال کے بعد رضاعت ثابت نہیں ہوگي جس سے حرمت ثابت ہوسکے ۔

جمہور علماء کرام کا مسلک یہی ہے ، ان کے دلائل میں مندرجہ بالا آیت اورنبی صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان بھی ہے :

( اس رضاعت سے حرمت ثابت ہوتی ہے جس سے انتڑیاں بھرجائیں اوردودھ چھڑانے کی مدت سے قبل ہو ) سنن ترمذی حدیث نمبر ( 1152 ) ترمذی رحمہ اللہ تعالی نے اسے حسن صحیح کہا ہے ۔

اوراکثراہل علم کے اورصحابہ کرام وغیرہ کا بھی عمل بھی اسی پر ہے کہ حرمت اسی رضاعت سے ثابت ہوتی ہے جودوسال سے کم عمر میں ہو اوردوبرس کی عمر کے بعد حرمت ثابت نہیں ہوتی ۔ ا ھـ

اس پر صحابہ کرام سے بھی آثار موجود ہیں :

ابوعطیہ وداعی رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں کہ ایک آدمی عبداللہ بن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما کے پاس آیا اورکہنے لگا : میرے ساتھ میری بیوی تھی اس کا دودھ اس کے پستانوں میں رک گيا تومیں نے اسے چوس کرپھینکنا شروع کردیا ، بعد میں ابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کے پاس گيا ، ابن عباس رضي اللہ تعالی عنہما نے کہا انہوں نے کیا فتوی دیا ؟

اس شخص نے ان کا فتوی بیان کیا ابن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما نے اس آدمی کا ہاتھ پکڑا اورابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کوکہنے لگے کیا آپ اسے دودھ پیتا بچہ سمجھ رہے ہیں ؟ رضاعت تو وہ ہے جس سے خون اورگوشت بنے ، توابوموسی رضي اللہ تعالی عنہ کہنے لگے جب تک آپ لوگوں میں یہ حبرالامہ ابن مسعود رضي اللہ تعالی عنہما موجود ہیں مجھ سے کسی بھی چيز کے بارہ میں نہ پوچھو ۔ مصنف عبدالرزاق ( 7 / 463 ) حدیث نمبر ( 1389 ) ۔

اور امام مالک نے بھی موطا میں ( 2 / 603 ) میں ابن عمررضي اللہ تعالی عنہما سے روایت کیا ہے کہ :

رضاعت تو اس کے لیے ہے جس نے بچپن میں دودھ پلایا اوربڑے کی رضاعت نہیں ۔ اس کی سند صحیح ہے ۔

عبداللہ بن دینار رحمہ اللہ تعالی بیان کرتےہیں کہ ایک شخص عبداللہ بن عمر رضي اللہ تعالی عنہما کے پاس آیا اورمیں بھی ان کے ساتھ تھا وہ دار قضاء کے پاس آئے اوربڑے شخص کی رضاعت کےبارہ میں سوال کرنے لگے ؟

توعبداللہ بن عمر رضي اللہ تعالی عنہما کہنے لگے کہ ایک شخص عمربن خطاب رضي اللہ تعالی عنہ کے پاس آکرکہنے لگا میری ایک لونڈی تھی جس سے میں وطئی کیا کرتا تھا میری بیوی نے اسے دودھ پلادیا ، میں جب میں اس کے پاس جانے لگا تومیری بیوی کہنے لگی اس سے دور رہو ، اللہ کی قسم میں نے اسے دودھ پلادیا ہے

عمررضي اللہ تعالی عنہ کہنے لگے اسے سزا دو اوراپنی لونڈی کے پاس جاؤ اس لیے کہ رضاعت توبچے کی ہے ۔ موطا امام مالک ، اس کی سند صحیح ہے ۔

تو اس سے یہ ثابت ہوا کہ بیوی کا دودھ چوسنے سے حرمت ثابت نہیں ہوتی ، اس کا کچھ بھی اثر نہیں ۔

ابن قدامہ رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں :

تحریم رضاعت میں یہ شرط ہے کہ وہ دوسال میں ہو ، اکثر اہل علم کا یہی قول ہے ، اوراسی طرح عمر ، علی ، ابن عمر ، ابن مسعود ، ابن عباس ، اورابوھریرہ رضي اللہ تعالی عنہم اورازواج مطہرات سے بھی روایت ہے صرف عائشہ رضي اللہ تعالی سے یہ ثابت نہیں ۔

امام شعبی ، ابن شبرمہ ، اوزاعی، امام شافعی ، اسحاق ، ابویوسف ، محمد ، ابوثور ، بھی اسی کے قائل ہیں اورامام مالک کی ایک روایت بھی اسی طرح کی ہے ۔

تو اس بنا پر بیوی کا دودھ چوسنا کوئي اثرانداز نہیں ہوتا اگرچہ اس کا ترک کرنا ہی اولی ہے ۔

شیخ محمد بن صالح عثیمین رحمہ اللہ تعالی سےاس مسئلہ کے بارہ میں پوچھا گیا توان کا جواب تھا :

بڑے کی رضاعت موثر نہیں ، اس لیے کہ رضاعت وہ موثر ہے جوپانچ یااس سے زائد رضعات ہو اور ہو بھی دو برس کی عمر تک دودھ چھڑانے سے قبل ، تواس بنا پر ہم اگرکوئي اپنی بیوی کا دودھ چوستا ہے یا پھر وہ پیتا ہے تواس کا بیٹا نہیں بنے گا ۔

دیکھیں فتاوی اسلامیۃ ( 3 / 338 ) ۔

واللہ اعلم .



شیخ محمد صالح المنجد


Kali Zuban Group: Members  Joined: 19th Sep, 2010  Topic: 30  Post: 1790  Age:  33  
Posted on:12th Apr 2009, 8:20pm
 

re: drinking wife milk

wife ka milk drink kerna makrooh hai, lekin drink kerne se nikah break nahi hota. lehaza divorce leni ki zaroorat nahi.
read previous post on: Breast Sucking and Drinking Wife Milk
For Detail Click On Page No: 1
 
 
 
 
 
Pakistan Day Celebration In Malaysia  How to find job with no work experience  Anita Dongre Fashion Designer In Dubai
  Prof Arshad Javed Hypnotist and Clinical Psychologist  

 


Warning :The information presented in this web site is not intended as a substitute for medical care. Please talk with your healthcare provider about any information you get from this web site.
© Copyright 2003-2017 www.noorclinic.com, All Rights Reserved Contact Us
Last Updated: 11th Sep 2014