Prof Arshad Javed Books In Urdu PDF Free Download
 

Forum.Noorclinic.com
Noor Clinic Pakistan Forum

 
Letter to Erfiwa
  Welcome : Guest
Login | Register | Rules
Noor Clinic| Forum | Health| Sex | General |Pakistani Matrimonial| Site Map
Procedure | Recent Post |New Topic | Most Viewed| Paigham e Quran and Hadees
  Ask A Doctor
Warning: This Website is not for people who are less than 16 years of age. Please Exit
 
Medical Forum Categories
Medical Discussion
Unmarried Boys Problems
Unmarried Girls Problem
Married Men Problem
Married Women Problem
Religion and Sex
Religion and Culture
Social Problem
General Health
Non Medical Discussion
Food & Recipes
Sports & Games
Politics
Urdu
Career and Success
Articles
Chatting
Suggestions
Women Health
Men Health
Junk and Spam
NoorClinic
Home(General)
Home(Health and Sex)
Forum Procedure
Noor Clinic Home
Baby Care
Daily Questions
  Start New Topic  My Profile
   

Does Anal Sex result in Breaking Marriage(Nikah)

Religion and Sex   >>  Anal Sex
   
  Honolulu Hawaii Bar Dance Shows Urdu Safarnama
 
jawad_papi Group: Members  Joined: 04th Mar, 2007  Topic: 1  Post: 1  Age:  28  
Posted on:4th Mar 2007, 8:02am
 

Does Anal Sex result in Breaking Marriage(Nikah)

Doctor Sahib aksar larko se suna hai ke apni biwi ke piche karne se nikah toot jata hai.aur agar jab kisi larki ke piche kar ke andar chor di jae mean jo larke ke agey se nikalti hai to is se larki ko koi nuksaan to nahin plz tell me about this.


atypk Group: Members  Joined: 27th Feb, 2007  Topic: 1  Post: 19  Age:  38  
Posted on:4th Mar 2007, 11:34pm
 

no nikah can't break after doing sex from behind. In islam anal sex is not allowed. If you do so then repent from that sin by Allah and don't do that sin again as it is haram in islam. Read book on same website for more help.
Group:   Joined: 01st Jan, 1970  Topic: 61  Post: 197  Age:   
Posted on:6th Mar 2007, 9:46am
 

faraghat ka masla

salam o alikam

 Dr sab muja pochna ha k mara faregat ka masla kasa khal ho ga plz tell me ma both parshan hoon

Edit Note: Irrelevant reply. Please post reply only relevant to the topic.




asadali Group: Members  Joined: 05th Mar, 2007  Topic: 0  Post: 2  Age:  32  
Posted on:7th Mar 2007, 10:36am
 

face problem

sir mein na bhoot hand practice ki hai jis se meray face per boot danaiy hai mujhe koi acha sa alaj batien
zaad Group: Members  Joined: 12th Apr, 2009  Topic: 0  Post: 1  Age:  32  
Posted on:19th Apr 2009, 6:15pm
 

carefully read

Insan ki aadhi zindagi to bachane se baray hone tak me hi khatam ho jati he. mere bhaiyo doosto islam me sirif 1 tariqa jaiz he r wo he sunnat k mutabiq aagay say..

baqi js mun se tum Quran Sharif parhte ho Allah ka naam lete ho ussi mun se ye sab karo gay... Thora sa fikar ka makam he..

                                   Allah ap tamam logo ko Naik amal r jaiz kam ki tofeeq ata farmay..

okashaha Group: Members  Joined: 02nd Apr, 2012  Topic: 0  Post: 13  Age:  50  
Posted on:9th Apr 2012, 7:35am
 

HEELO

dEAR US KO READ KAREN BAAT AAP KO SAMAJ AA JAYE JI.

--

okashaha Group: Members  Joined: 02nd Apr, 2012  Topic: 0  Post: 13  Age:  50  
Posted on:9th Apr 2012, 7:41am
 

heelo

Mard kiye leye harm hye back site use karna auran aur haddesh ka study karen.us ka zakir bukari sharif-tarmazi sharif-abou daud mae is ka zakuir hye

والے فلاسفہ و اطباء اس سے روكتے ہيں، كيونكہ فرج يعنى قبل كو پھينكے گئے پانى كو جذب كرنے كى صلاحيت حاصل ہے، جس سے مرد كو راحت حاصل ہوتى ہے، ليكن دبر ميں وطئ كرنے سے نہ سارا پانى جذب ہوتا ہے اور نہ ہى مرد كو راحت حاصل ہوتى ہے كيونكہ طبعى امر كى مخالفت ہونے كى بنا پر مكمل پانى كا اخراج ہى نہيں

كے علاوہ باقى ہر قسم كا استمتاع مباح قرار ديا، اور وطئ يہ قبل اور دبر دونوں كو شامل ہے.

ابن قيم رحمہ اللہ نے دبر ميں وطئ كى حرمت كى كئى ايك وجوہات بيان كي ہيں جن ميں سے چند ايك يہ ہيں:

يہ بھى ہے كہ: عورت كو اپنے خاوند سے وطئ كا حق حاصل ہے، اور بيوى سے دبر ميں وطئ كرنے سے بيوى كا يہ حق فوت ہو جاتا ہے، اور اس طرح اس كى خواہش پورى نہيں ہوتى اور نہ ہى مقصد حاصل ہوتا ہے.

اور يہ بھى ہے كہ: دبر ميں وطئ كرنا مردوں كے ليے نقصان دہ ہے، اسى طرح عقل و دانش ركھنے والے فلاسفہ و اطباء اس سے روكتے ہيں، كيونكہ فرج يعنى قبل كو پھينكے گئے پانى كو جذب كرنے كى صلاحيت حاصل ہے، جس سے مرد كو راحت حاصل ہوتى ہے، ليكن دبر ميں وطئ كرنے سے نہ سارا پانى جذب ہوتا ہے اور نہ ہى مرد كو راحت حاصل ہوتى ہے كيونكہ طبعى امر كى مخالفت ہونے كى بنا پر مكمل پانى كا اخراج ہى نہيں ہوتا.

اور يہ بھى ہے كہ: ايسا كرنا عورت كے ليے بہت مضر اور نقصاندہ ہے، كيونكہ يہ ايسى چيز ہے جو طبعى طور پر بھى انتہائى نفرت كا باعث ہے.

اور يہ بھى ہے كہ اس سے غم و پريشانى اور فاعل و مفعول كے ساتھ نفرت پيدا ہوتى ہے.

اور يہ بھى ہے كہ يہ چہرے كى سياہى كا باعث بنتا ہے اور سينے كو نور سے دور كر ديتا ہے، اور نور قلبى كو ختم كرنے كا باعث بن كر چہرے پر وحشت طارى كر ديتا ہے اور يہ ايك علامت كى شكل اختيار كر ليتا ہے جسے ادنى سى فہم و فراست ركھنے والا شخص بھى پہچان ليتا ہے.

اور يہ بھى ہے كہ: فاعل اور مفعول كے مابين شديد قسم كى نفرت و بغض اور قطع تعلقى كا باعث بنتا ہے. انتہى

ديكھيں: زاد المعاد ( 4 / 262 ).

آپ كے ليے جائز نہيں كہ خاوند كو ايسا فعل كرنے ديں بلكہ اس عمل سے ركنا واجب ہے، چاہے اس كے نتيجہ ميں آپ كو اپنے ميكہ ہى كيوں نہ جانا پڑے، بلكہ اگر اس كے ليے طلاق كا سہارا بھى لينا پڑے تو كوئى حرج نہيں ہے.

خاص كر آپ كے اس خاوند كو جس كے بارہ ميں آپ نے شادى سے قبل كى حالت بيان كى ہے اسے اس برائى اور فحش كام سے روكنا ضرورى ہے، اللہ سبحانہ و تعالى سے عافيت كى دعا ہے، كيونكہ اس كا آپ كے ساتھ اس قبيح اور شنيع عمل جارى ركھنا اور مباح وطئ و جماع پر اكتفاء نہ كرنا اسے دوبارہ فحاشى كى طرف لے جانے كا باعث بن سكتا ہے.

اس نے جو عذر بيان كيے ہيں ان كى كوئى قدر و قيمت نہيں ہے، اور پھر اس كے ان عذروں ميں آپ كو دھيان نہيں دينا چاہيے، كيونكہ وہ تو آپ كو اللہ كے غضب اور جہنم كى آگ كى دعوت دے رہا ہے.

انسان اپنے آپ كو ہلاك كر كے كسى دوسرے كو راحت نہيں ديتا ـ اگر اس جيسے عمل ميں راحت ہو ـ بلكہ اس ميں تو ايك نہيں بلكہ دونوں كى ہلاكت ہے.

اور جب وہ كچھ ايام صحيح راہ اختيار كر چكا ہے تو ہم اميد ركھتے ہيں كہ اللہ سبحانہ و تعالى اسے اس بلاء سے دور كريگا، اور آپ كو چاہيے كہ آپ ہر طرح سے پختگى كے ساتھ اس عمل سے انكار كريں اور اس ميں كوئى ڈھيل مت برتيں تا كہ وہ آپ كى جانب سے اس حرام كام ميں شريك ہونے سے نا اميد ہو جائے، اور اس سلسلہ ميں اس كى اميد بھى ختم ہو جائے.

شيخ الاسلام ابن تيميہ رحمہ اللہ سے درج ذيل سوال كيا گيا:

اگر كوئى شخص اپنى بيوى كى دبر ميں وطئ كرے تو اس پر كيا واجب ہوتا ہے ؟ اور كيا كسى عالم دين نے اسے مباح بھى قرار ديا ہے ؟

شيخ الاسلام كا جواب تھا:

الحمد للہ رب العالمين:

سب تعريفات اللہ پروردگار كے ليے ہيں، كتاب اللہ اور سنت رسول اللہ صلى اللہ عليہ وسلم ميں بيوى كے ساتھ دبر ميں وطئ كرنا حرام ہے، اور عام مسلمان آئمہ كرام بھى اسى حرمت كے قائل ہيں، جن ميں صحابہ كرام اور تابعين عظام وغيرہ شامل ہيں.

كيونكہ اللہ سبحانہ و تعالى نےاپنى كتاب عزيز ميں فرمايا ہے:

{ تمہارى بيوياں تمہارى كھيتياں ہيں تم اپنى كھيتى ميں جہاں سے چاہو آؤ، اور اپنے ليے آگے بھيجو }.

اور صحيح حديث ميں ثابت ہے كہ: يہودى كہا كرتے تھے كہ اگر كوئى شخص اپنى بيوى سے دبر كى جانب سے اس كى قبل ميں جماع كرے تو بچہ بھينگا پيدا ہوتا ہے، چنانچہ مسلمانوں نے رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم سے اس كے متعلق دريافت كيا تو اللہ سبحانہ و تعالى نے يہ آيت نازل فرمائى:

{ تمہارى بيوياں تمہارى كھيتياں ہيں، چنانچہ تم اپنى كھيتى ميں جہاں سے چاہو آؤ اور اپنے ليے آگے بھيجو }.

اور حرث يعنى كھيتى وہ جگہ ہے جہاں كاشت كى جائے اور بچہ تو فرج يعنى شرمگاہ ميں كاشت ہوتا ہے نہ كہ دبر ميں اور اثر ميں وارد ہے كہ: دبر ميں وطئ كرنا لواطت صغرى ہے اور نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم كا فرمان ہے:

" يقينا اللہ عزوجل حق بيان كرنے سے نہيں شرماتا، تم عورتوں كى دبر ميں وطئ مت كرو "

يہاں الحش سے مراد دبر ہے، جو كہ گندگى والى جگہ ہے اور پھر اللہ عزوجل نے حيض كى حالت ميں بيوى سے جماع كرنا حرام قرار ديا ہے حالانكہ يہ گندگى تو اس كى فرج ميں ايك عارضى گندگى ہے، ليكن وہ جگہ جہاں مستقل طور پر بڑى نجاست يعنى پاخانہ ہو اس كے بارہ ميں كيا حكم ہوگا.

اور يہ بھى ہے كہ: يہ لواطت كى جنس سے ہے" شيخ الاسلام رحمہ اللہ نے يہان تك كہا ہے:

" جس نے اپنى بيوى سے اس كى دبر ميں وطئ كى اسے ايسى سزا دينى چاہيے جو اسے اس كام سے منع كرنے كا باعث بن سكے، اور اگر يہ علم ہو جائے كہ وہ دونوں ايسا كرنے سے باز نہيں آ رہے تو پھر ان دونوں ميں عليحدگى كرانا واجب ہے " واللہ تعالى اعلم " انتہى

ديكھيں: مجموع الفتاوى ( 32 / 267 ).

جناب مولانا صاحب ميں درج ذيل سوال كا جواب چاہتى ہوں، كيونكہ يہ مجھے بہت پريشان كيے ہوئے ہے، اور ميرے ليے بہت اہم ہے:

ميرا خاوند مطالبہ كرتا ہے كہ وہ پيچھے سے آئے ـ يعنى پاخانہ والى جگہ استعمال كرنا چاہتا ہے ـ ليكن ميں اس سے انكار كرتى ہوں، اور وہ مجھے ايسا كرنے پر اس درجہ تك مجبور كرتا ہے كہ ميں رونے لگتى ہوں اور ايسا كرنے سے انكار كرتى ہوں، ليكن وہ مجھے ايسا كرنے پر مجبور كرتا ہے، برائے مہربانى مجھے معلومات فراہم كريرں، اللہ تعالى آپ كو جزائے خير عطا فرمائے ؟

شيخ رحمہ اللہ كا جواب تھا:

عورت سے دبر ميں وطئ كرنا كبيرہ گناہ ہے، حتى كہ اس سلسلہ ميں شديد قسم كى وعيد آئى ہے، يہاں تك كہ اس كے متعلق كفر كى وعيد بھى وارد ہے، اور لعنت كى وعيد بھى ہے اور اسے لواطت صغرى كا نام ديا جاتا ہے.

اور اس كى حرمت پر بہت سارے دلائل دلالت كرتے ہيں اور اس سلسلہ ميں جو بعض سلف سے منقول ہے كہ انہوں نے اسے مباح كہا ہے يہ ان كے ذمہ غلط لگايا گيا ہے، جيسا كہ ابن قيم وغيرہ نے زاد المعاد ميں نقل كيا ہے.

انہوں نے تو اس سے مراد يہ ليا ہے كہ دبر كى طرف سے فرج ميں جماع كيا جائے، اور يہ جائز ہے كہ انسان اپنى بيوى سے فرج ميں جماع كرے ليكن پچھلى جانب سے، اصل يہ ہے كہ جماع صرف شرمگاہ يعنى قبل ميں ہو تو اس ميں كوئى حرج نہيں.

اس ليے كہ اللہ سبحانہ و تعالى كا فرمان ہے:

{ تمہارى بيوياں تمہارى كھيتي ہيں تم اپنى كھيتى ميں جہاں سے چاہو آؤ }البقرۃ ( 223 ).

ليكن دبر ميں وطئ نہيں كرنى چاہيے، يہاں ايك مسئلہ ہے:

بعض لوگ يہ خيال كرتے ہيں كہ اگر اس نےايسا كيا ـ يعنى اگر اس نے بيوى كى دبر ميں وطئ كى ـ تو نكاح ٹوٹ جاتا ہے، حالانكہ ايسا نہيں، بلكہ نكاح باقى ہے، ليكن اگر وہ اس كے عادى ہو جائيں اور مسلسل ايسا كريں توان كے ماين عليحدگى كرانى واجب ہوگى، يعنى ايسا كام كرنے والے خاوند اور بيوى ميں عليحدگى كرا دى جائيگى.

اور عورت كے ليے حكم يہ ہے كہ وہ حسب قدرت و استطاعت اس سے اجتناب كرے، ميرى پہلے تو خاوندوں كو نصيحت ہے كہ وہ اپنے اور اپنے گھر والوں بيوى بچوں كے متعلق اللہ تعالى كا تقوى اختيار كريں اور اپنے آپ كو سزا كا مستحق مت بنائيں.

اور پھر ميرى بيويوں كو نصيحت ہے كہ وہ ايسے عمل سے بالكل رك جائيں اور ايسا نہ كرنے ديں چاہے اس كے نتيجہ ميں انہيں خاوند كے گھر سے اپنے ميكہ ہى كيوں نہ جانا پڑے تو ميكے چلى جائے اور وہ خاوند كے پاس مت رہے، اس حالت ميں وہ خاوند كى نافرمان نہيں ہوگى، كيونكہ وہ تو ايك معصيت و نافرمانى سے بھاگى ہے.

اور اس حالت ميں بيوى كا اپنے خاوند پر نان و نفقہ ہو گا، اگر وہ اپنے ميكے ايك يا دو ماہ رہتى ہے تو اسے اخراجات مانگنے كا حق حاصل ہے، كيونكہ خاوند كى جانب سے ظلم ہوا ہے؛ اس ليے كہ خاوند كے ليے حلال نہيں كہ وہ اپنى بيوى كو ايسے فحش عمل پر مجبور كرے " انتہى

ماخوذ از: اللقاء الشھرى ( 59 / 14 ).

اللہ تعالى سے دعا ہے كہ وہ آپ كے خاوند كو ہدايت عطا فرمائے، اور اسے سيدھى راہ اورحق كى طرف لوٹائے.

واللہ اعلم .


الاسلام سوال وجواب






myrizvi Group: Members  Joined: 20th Apr, 2008  Topic: 133  Post: 8408  Age:  58  
Posted on:11th Apr 2012, 9:26am
 

yeh gonaah hai

sakht haraam hai...magar aisaa karnay say nikaah break nahi hota
hakim ali Group: Members  Joined: 25th May, 2013  Topic: 0  Post: 1  Age:  29  
Posted on:25th May 2013, 11:26pm
 

mera semen analysis report

doctor sahab i am hakim ali 25 years old,here is my semen analysis repor. plz check out my report.is than any problem in it?i am married.

quantity 5 ml
colour greyish white
transparancy opaque
viscosity viscid
liqufication time 30 mnts
pH 7.5
fructose positive
sperm count 25mill/ml
live count 13mill/ml
sperm per ejaculate 125 mill
%ge motile sperm 50%
rapid linear progression 00%
non lin progrssion 50%
non progressive 50%
sperm morphology normal form 10%
head abnormality
small oval 20%
tapering 20%
duplicate 20%
round 30%
mid piece abnormality
wbc's 01
rbc's 01
For Detail Click On Page No: 1
 
 
 
 
 
Pakistani Student In Harvard University  How to get college scholarship in usa  Bangladeshi Community Celebrating Canada Day In Toronto
  Prof Arshad Javed Hypnotist and Clinical Psychologist  

 


Warning :The information presented in this web site is not intended as a substitute for medical care. Please talk with your healthcare provider about any information you get from this web site.
© Copyright 2003-2017 www.noorclinic.com, All Rights Reserved Contact Us
Last Updated: 11th Sep 2014