Forum.Noorclinic.com
Noor Clinic Pakistan Forum

 
a
  Welcome : Guest
Login | Register | Rules
Noor Clinic| Forum | Health| Sex | General |Pakistani Matrimonial| Site Map
Procedure | Recent Post |New Topic | Most Viewed| Paigham e Quran and Hadees
 
Warning: This Website is not for people who are less than 16 years of age. Please exit
 
Medical Forum Categories
Medical Discussion
Unmarried Boys Problems
Unmarried Girls Problem
Married Men Problem
Married Women Problem
Religion and Sex
Religion and Culture
Social Problem
General Health
Non Medical Discussion
Food & Recipes
Sports & Games
Politics
Urdu
Career and Success
Articles
Chatting
Suggestions
Women Health
Men Health
Junk and Spam
NoorClinic
Home(General)
Home(Health and Sex)
Forum Procedure
Noor Clinic Home
Book For All
Book For Women
Book For Men
Baby Care
Daily Questions
    Start New Topic  My Profile
 

Before Married Sex

Religion and Sex   >>   Sex Before Marriage
 
 
alimalik Group: Members  Joined: 14th Jun, 2011  Topic: 8  Post: 31  Age:  28  
Posted on:16th Jul 2013, 4:16am
 

Before Married Sex

Salaam.   mera name ali he.  main ap se ye pochna chahta hun k agr aik larka larki jin ki mangni hui ho or 1 mah baad unki shadi ho magr wo shadi se kuch din phly ya jab b shadi se phly sex krty hy or shadi k kuch din baad ya kuch din phly wo larki pregnant ho jaati he to kia wo paida hony ka bacha haraam ka ho ga ya halal.
for example shadi k kuch din baad pta chalta he k larki pregnant ho gyi he us sex ki wja se jo shadi se phly usi larke k sath kia jis k sath shadi hui he to kiaa us waqt bacha gira dena chahye , agr bacha paida hua to kiaa wo jaayz ho ga ya najaayz.. please zara tafseel se btaaye ga. thanks
myrizvi Group: Members  Joined: 20th Apr, 2008  Topic: 130  Post: 7755  Age:  55  
Posted on:16th Jul 2013, 6:42am
 

BMS

1. nikaah say pahlay (khaah mangni ho chuki ho) ... agar larka aur laRki intercourse kartay hain to yeh sakht gonaah hai. donoun zaani aur zania kahlayengay, jinkay liyeh islam maiN koRouN ki sazaa hai ... islami adalat inhain koRoun ki sazaa day sakti hai

2. sazaa milay yaa nah milay donouN sakht gonaah.gaar haiN...lehaza donoun ko Alah say maafi maangni chaahiyeh, sidqay dil say. Allah ghafoor ur Raheem hai, saray gonaah maaf karnay wala hai

3. chouNkay zina k baad donoun nay shadi karli hai, lehaza iss zina ki wajah say honay wala bacha jaiz tasawwar hoga. issay harami aulaad qarar nahi dia jasakta ... khaah yeh hamaal nikaah say kich din pahlay Thahar gaya ho yaa kai maheenay qabal... time period say koi faraq nahi paRta... shadi k few months baad bhi delievery ho to bacha donoun ka hi hoga aur jaiz hoga.

4. bila kisis sharayee wajah say abortion karana sakh manaa aur bara gonaah hai... aik bara gonaah ap donoun pahlay hi kar chukaya haiN...ab hamal giraa kar doosra bara gonaah nah karaiN...aur koshish karaiN k nikaah say qabal gonaah wali baat kissi ko nah batlayaiN... bilkhasoos honay walay bachay ko yeh baat kabhi maloom nahi honi chahiyeh warnah oski zindagi complex ka shikaar hosakti hai

wallaho aalam bissawab
alimalik Group: Members  Joined: 14th Jun, 2011  Topic: 8  Post: 31  Age:  28  
Posted on:16th Jul 2013, 1:03pm
 

Before Married Sex

thanks sir.... ap ne meri problm solve kr di.. ALLAH APKA HAMIOnAASIR HO
alimalik Group: Members  Joined: 14th Jun, 2011  Topic: 8  Post: 31  Age:  28  
Posted on:18th Jul 2013, 7:03am
 

About girl fingiring

salam.
main kici k liy ap se pochna chahta hun k larka larki fone per apas me sex krty ho or larki apni vagina me fingiring krti ho or phr discharge ho jati ho aisa wo her 2, 4 din baad krti ho to kiaaa ye nuksaan daaa he larki k liy. is se kiaa nuksaan ho skta he larki ko. ku k fone per sex krty waqt aik larki josh me fingiring krti he or phr discharge ho jati he to kiaaa aisa krna larki k liy koi problm create kr skta he yaa is k ilawa kiaa ho skta he.. please mje iska jwab b tafseel se btaay ga ta k main isy agay b tafseel se discuss kr sku... thanks. ALLAH HAFIZ
D3AD! Group: Members  Joined: 06th Aug, 2013  Topic: 1  Post: 12  Age:  23  
Posted on:8th Sep 2013, 11:11pm
 

Reply to alimalik

AOA,
bhai jaan yh sareehan naajaiz amal hy woh aulad haramzadi karaar pai gi, or krny wala zanni kehlai ga or jis k saath hua woh bhi zanni kehlai gi agr us ki marzi shamil e haal rhi tu,
deen mn kai olmaah hazraat ny yh bhi kaha hy k jis aurat k saath zina kiya gya ho woh zani k liyay jaiz nehi rhti mtlb aap us sy shareetan nikah bhi nehi krskty (not sure about this one) barhaal yh najaiz ghairfitri, or gunah hy, or zinaa bhi

haan albta agr nikah ho gya hy lekin rukhsti nehi hui tu phr sex krny sy zinna nehi hoga lekin is harkat sy aap k walidain or larki k walidain k liyay problems ho skti hn kiun k society rukhsti sy pehly sex ko theek nehi smjhti lekin agr aap ny kisi trha nikah k baad or rukhsti sy pehly mubashrat kr li or hamal tehar gya tu peda honay waali olad katan naa jaiz nehi hogi


reh gai phone wali baat
yh kataan jaiz nehi aik tu aap na mehram sy phone py baat krain gy woh gunah plus laghoo goi sy usay seduce krain gy doosra gunah plus us sy aik naajaiz amal(fingring) bhi krwain gy teesra gunah , usay buray kaam ki trf maail krain gy chotha gunah plus agar yh us ki adat bn gai tu har dfa jb woh is gher fitri amal ko sr anjaam dy gi us ki wjha sy aap ko gunah milta rhy ga kiun k buray kaam ki targheeb deny walay aap,

hope u get satisfied
okashaha Group: Members  Joined: 02nd Apr, 2012  Topic: 0  Post: 13  Age:  47  
Posted on:26th Sep 2013, 8:25am
 

Oksaha

الحمد للہ:

جمہور علماء كرام كے ہاں اگر اس نے عورت كى رضامندى سے زنا كيا تو عورت كو كچھ ادا نہيں كيا جائيگا، ليكن اگر عورت سے زنا بالجبر كيا جائے يعنى وہ نہ چاہتى ہو تو زنا كرنے والے شخص پر ضمان ہو گى.

الموسوعۃ الفقھيۃ ميں درج ہے:

" اگر عورت سے زنا كارى كى جائے اور عورت اس پر راضى ہو تو دونوں كو حد لگائى جائيگا، اور احناف، مالكيہ، اور حنابلہ كے ہاں اس پر كوئى جرمانہ نہيں، كيونكہ يہ ضرر عورت كى رضامندى اور اجازت سے ہوا ہے اس ليے مرد پر كوئى ضمان نہيں.

اور شافعيہ كہتے ہيں كہ: اس كو حد لگانے كے ساتھ ديت بھى ادا كرنا ہو گى؛...

اور اگر عورت سے زنا بالجبر كيا جائے يعنى وہ اس زنا پر راضى نہ ہو تو غصب كرنے يعنى زنا كرنے والے شخص پر حد جارى ہو گى اور اسے ضمان بھى ادا كرنا ہو گى اس پر اجماع ہے، ليكن يہ ضمان كى مقدار ميں اختلاف پايا جاتا ہے " انتہى

ديكھيں: الموسوعۃ الفقھيۃ ( 5 / 297 ).

شيخ ابن عثيمين رحمہ اللہ نے يہ راجح كيا ہے كہ زنا كرنے والے مرد پر بكارت زائل كرنے كى ديت ہو گى، اور يہ ديت شادى شدہ اور كنوارى كے مہر ميں فرق كے اعتبار سے ہو گى.

شيخ رحمہ اللہ كہتے ہيں:

" ہم نے جو قول راجح قرار ديا ہے ـ وہ يہ كہ جس عورت سے زنا كيا گيا ہو چاہے وہ زنا پر رضامند ہو يا اس سے بالجبر زنا كيا گيا ہو اس كو كوئى مہر نہيں ملے گا ـ اس قول كى بنا پر ہم يہ كہنيگے كہ: زنا كرنے والے شخص پر بكارت زائل يعنى كنوارہ پن زائل كرنے كى بنا پر ديت ادا كرنا ہو گى اگر وہ كنوارى ہو اور اس سے جبرا زنا كيا گيا ہو؛ كيونكہ اس نے اس كى بكارت اس سبب كے باعث ضائع كر دى ہے جس سے عادتا تلف ہو جاتى ہے.

اور بكارت كى ديت يہ ہے كہ: عورت كے شادى شدہ ہونے يا كنوارى ہونے ميں جو مہر كا فرق ہوتا ہے وہ ہو گى، اس ليے جب ہم كہيں كہ اس شادى شدہ عورت كا مہر ايك ہزار ريال ہے، اور اگر كنوارى ہو تو اس كا مہر دو ہزار ريال تو اس طرح اس كى ديت ايك ہزار ريال ہو گى " انتہى

ديكھيں: الشرح الممتع ( 12 / 313 - 314 ).

واللہ اعلم .

okashaha Group: Members  Joined: 02nd Apr, 2012  Topic: 0  Post: 13  Age:  47  
Posted on:26th Sep 2013, 8:26am
 

Oksaha



الحمد للہ:

اول:

پہلى بات تو يہ ہے كہ زنا ايك عظيم جرم اور كبيرہ گناہ ہے جس كى بنا پر زانى سے ايمان سلب ہو جاتا ہے، اور وہ عذاب و ذلت اور رسوائى سے دوچار ہوتا ہے، الا يہ كہ وہ توبہ و استغفار كر لے.

اللہ سبحانہ و تعالى كا فرمان ہے:

 اور تم زناكارى كے قريب بھى نہ جاؤ، يقينا يہ بہت فحش كام اور برا راہ ہے الاسراء ( 32 ).

اور رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم كا فرمان ہے:

" جب زانى زنا كرتا ہے تو وہ اس وقت مومن نہيں ہوتا "

صحيح بخارى حديث نمبر ( 2475 ) صحيح مسلم حديث نمبر ( 57 ).

اور ايك دوسرى حديث ميں رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم كا فرمان ہے:

" جب مرد زنا كرتا ہے تو اس سے ايمان خارج ہو جاتا ہے وہ اس پر سائبان كى طرح ہوتا ہے، اور جب وہ زنا ختم كرتا ہے تو ايمان اس ميں واپس آ جاتا ہے "

سنن ابو داود حديث نمبر ( 4690 ) سنن ترمذى حديث نمبر ( 2625 ) علامہ البانى رحمہ اللہ نے صحيح ابو داود ميں اسے صحيح قرار ديا ہے.

اور پھر نبى كريم صلى اللہ عليہ وسلم نے ہميں بتايا ہے كہ زانيوں كو قيامت سے قبل ان كى قبروں ميں آگ كا عذاب ديا جائيگا.

صحيح بخارى حديث نمبر ( 1320 ).

اور پھر اس جرم كى قباحت كى بنا پر اللہ عزوجل نے اس كى سزا رجم ركھى ہے كہ اگر زانى شادى شدہ ہے تو اس كو موت تك پتھر مارے جائيں، اور اگر شادى شدہ نہيں تو اسے ايك سو كوڑے مارے جائيں.

اور جو شخص بھى اس ميں مبتلا ہو اسے اس كام سے جتنى جلدى ہو سكے توبہ كرنى چاہيے، اور اس اميد سے كثرت كے ساتھ اعمال صالحہ كرے كہ اللہ عزوجل اسے معاف كر ديگا.

فرمان بارى تعالى ہے:

 اور وہ لوگ جو اللہ كے ساتھ كسى اور كو معبود نہيں بناتے اور نہ ہى وہ اس نفس كو قتل كرتے ہيں جسے قتل كرنا اللہ نے حرام كيا ہے، مگر حق كے ساتھ، اور نہ ہى وہ زنا كا ارتكاب كرتے ہيں، اور جو كوئى يہ كام كرے اسے گناہ ہو گا، اور روز قيامت اسے دگنا عذاب ديا جائيگا، اور وہ ذلت و خوارى كے ساتھ ہميشہ اس ميں رہے گا، سوائے ان لوگوں كے جو توبہ كر ليں اور ايمان لے آئيں، اور نيك كام كريں، اللہ تعالى ايسے لوگوں كے گناہوں كو نيكيوں ميں بدل ديتا ہے، اللہ تعالى بخشنے والا مہربانى كرنے والا ہے الفرقان ( 67 - 70 ).

اور ايك مقام پر ارشاد بارى تعالى ہے:

 اور يقينا ميں اس شخص كو بہت زيادہ بخشنے والا ہوں جو توبہ كرتا اور ايمان لاتا اور نيك و صالح اعمال كرتا اور پھر ہدايت پر رہتا ہے طہ ( 82 ).

اور ان دونوں كو چاہيے كہ اگر اللہ عزوجل نے ان كے اس گناہ پر پردہ ڈالا ہوا ہے تو وہ اس پردہ ميں ہى رہيں اور اس كى خبر كسى دوسرے كو مت ديں، رسول كريم صلى اللہ عليہ وسلم كا فرمان ہے:

" ان گندى اشياء سے اجتناب كرو جن سے اللہ سبحانہ و تعالى نے منع كر ركھا ہے، اور اگر كوئى شخص اس كا شكار ہو جائے تو اسے اللہ كے پردہ سے پردہ اختيار كرنا چاہيے "

اسے بيہقى نے روايت كيا ہے اور علامہ البانى رحمہ اللہ نے احاديث الصحيحۃ حديث نمبر ( 663 ) ميں صحيح قرار ديا ہے.

دوم:

زانى مرد اور زانى عورت كا آپس ميں اس وقت تك نكاح جائز نہيں جب تك كہ وہ اس گناہ سے سچى اور پكى توبہ نہ كر ليں؛ كيونكہ اللہ سبحانہ و تعالى كا فرمان ہے:

 زانى مرد سوائے زانى يا مشركہ عورت كے كسى اور سے نكاح نہيں كرتا، اور زانيہ عورت سوائے زانى يا مشرك مرد كے كسى اور سے نكاح نہيں كرتى، اور ايمان والوں پر يہ حرام كر ديا گيا ہے النور ( 3 ).

يعنى زانى مرد اور عورت كا نكاح حرام ہے.

اس ليے اگر تو دونوں نے شادى سے قبل اس حرام كام سے توبہ كر لى تھى تو ان كا نكاح صحيح ہے، ليكن اگر انہوں نے توبہ سے قبل عقد نكاح كرايا تھا تو ان كا نكاح صحيح نہيں، اور انہيں اپنے كيے پر نادم ہو كر اس سے توبہ كرنى چاہيے اور آئندہ پختہ عزم كرنا چاہيے كہ وہ اس كام كو دوبارہ نہيں كريں گے، پھر وہ اپنا نكاح دوبارہ كرائيں، اس كا تفصيلى بيان سوال نمبر ( --

واللہ اعلم .

okashaha Group: Members  Joined: 02nd Apr, 2012  Topic: 0  Post: 13  Age:  47  
Posted on:26th Sep 2013, 8:28am
 

Oksaha

الحمد للہ
اے مسلم ! آپ کا سوال کسی ایک مشکل پر نہیں بلکہ کئي ایک مشکلات پر مشتمل ہے ذيل میں ہم انہیں بیان کرتے ہيں :

1 اسلام سے منسوب آپ کی رشتہ دار لڑکی اوردوست کا بے نماز ہونا، ایسا عمل کفریہ اعمال میں شمار ہوتا ہے آپ اس کی تفصیل دیکھنے کے لیے سوال نمبر ( --

2 زنا کا ارتکاب ، یہ سب کومعلوم ہے کہ دین اسلام میں زنا حرام ہے بلکہ صرف اسلام میں ہی نہیں باقی سب آسمانی ادیان میں بھی یہ حرام ہے ۔

3 - زانی عورت جوکہ زنا سے حاملہ ہے سے شادی کرنا ۔

4 - زانی مرد کا ایسی زانی عورت سے شادی کرنے کا مطالبہ جوکسی اورسے شادی بھی کرچکی ہے ۔

توہم کس مصیبت اوربیماری سے شروع کریں ، اورکس سوال کا جواب دیں ؟ لاحول ولاقوۃ الا باللہ ۔

ہم سب سے اہم چیز سے ابتداء کرتے ہیں :

1 - دینی شعائر اورنماز ترک کرنے کی وجہ سے کفر ۔

اس میں تو کوئي شک وشبہ نہیں کہ کفر جہنم کی آگ میں داخل ہونے اورجلنے کا سبب ہے ۔

اللہ سبحانہ وتعالی نے مشرکوں کے بارہ میں یہ فرمایا ہے کہ جب ان سے پوچھا جائے گا کہ تمہارے جہنم میں جانے کا سبب کیا ہے تو وہ جواب دیں گے :

{ وہ جواب دیں گے کہ ہم نمازی نہ تھے ،اور نہ ہی مسکینوں کو کھانا ہی کھلاتے تھے ، اور ہم بحث کرنے والوں ( انکاریوں ) کا ساتھ دے کر بحث ومباحثہ میں مشغول رہا کرتے تھے ، اورہم قیامت کے دن کوجھٹلایا کرتے تھے ، یہاں تک کہ ہمیں موت آگئي } المدثر ( 43-47 )۔

حافظ ابن کثیر رحمہ اللہ تعالی اس کی تفسیر میں کہتے ہیں :

{ ہم نمازي نہ تھے } یعنی ہم نے اپنے رب کی عبادت ہی نہ کی ۔

{ اورہم مسکینوں کو کھانا بھی نہیں کھلاتے تھے } یعنی ہم نے اپنی جنس کی مخلوق کے ساتھ بھی احسان اورحسن سلوک نہ کیا ۔

{ اورہم بحث کرنے والے ( انکاریوں ) کے ساتھ مل کربحث ومباحثہ میں مشغول رہا کرتے تھے } یعنی : ہم ایسی باتیں کیا کرتے تھے جن کا ہمیں علم ہی نہ تھا ۔

قتادہ رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں :

جب بھی کسی گمراہ شخص نے بات کی اورگمراہ ہوا ہم بھی اس کے ساتھ گمراہ ہوئے ۔

{ اورہم روز قیامت کوجھٹلایا کرتے تھے } ابن جریر رحمہ اللہ تعالی کہتے ہیں : وہ کہیں گے ہم بدلہ اور ثواب وعذاب والے دن کی تکذیب کرتے تھے ، اورنہ ہی ہم ثواب کی تصدیق کرتے تھے اور نہ ہی سزا اورحساب وکتاب کی ۔

{ حتی کہ ہمیں موت آ گئي } یعنی موت کا وقت آپہنچا ، جیسا کہ اللہ تعالی کا فرمان ہے :

{ اوراپنے رب کی عبادت اس وقت تک کرو کہ تمہیں موت آجائے } ۔

ہم سائل کے بارہ میں گزارش کرینگے کہ آپ پر واجب ہے کہ انہیں وعظ ونصیحت کرتے رہیں اوران پر حجت قائم کریں اوران کےسامنے یہ بیان کریں کہ وہ دین کے ستون نماز جوکہ دین اسلام کے ارکان میں سے ایک رکن بھی ہے کونہ گرائيں اوراسے ترک نہ کریں ، بلکہ انہیں چاہیے کہ جتنی جلدی ہوسکے نماز کی ادائيگي نہ کرنے اورباقی شعائر اسلام پرعمل نہ کرنے سے توبہ کریں اوراس پر فوری طور پر عمل کریں ۔

اورآپ کے لیے بے نماز کے ساتھ کسی بھی حال میں سستی کرنا جائز نہیں ، بلکہ اسے نصیحت کرتے ہوئے اس کی طرف توجہ دلائیں ، اگر وہ پھر بھی نہیں مانتا توپھر اس سے علیحدگي اوراعراض کریں اوراس کوسلام کرنے سے بھی پرہيز کریں ، اورنہ ہی اس کے ساتھ بیٹھ کرکھائيں پیيں اور نہ ہی اسے کھلائيں ، اوراس کے ساتھ اٹھنے بیٹھنے سے بھی رک جائيں ، تا کہ اسے یہ محسوس ہو کہ وہ بہت ہی بڑے گناہ کا مرتکب ہورہا ہے ہوسکتا ہے کہ اس سے ایسا کرنا فائدہ مند ہواور وہ اس سے اسے توبہ کرتے ہوئے رب کی طرف رجوع کرلے ۔

2 - زنا کا ارتکاب کرنا بہت ہی بڑا گناہ ہے ۔

اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :

{ اورتم زنا کے قریب بھی نہ جاؤ یقینا یہ بہت ہی فحش کام اوربرا راستہ ہے } الاسراء ( 32 ) ۔

اورنبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم کا فرمان کچھ اس طرح ہے :

( زانی زنا کی حالت میں مومن نہیں ہوتا اورنہ ہی شراب نوشی کرنے والا شراب نوشی کرتے وقت مومن ہوتا ہے ، اورنہ ہی چوری کرنے والا چوری کرتے وقت مومن ہوتا ہے ، اورنہ ہی ڈاکہ ڈالنے والا جب ڈاکہ ڈالے اورلوگ اس کی طرف اپنی نظریں اٹھائيں ہوئے ہوں تو وہ ڈاکہ ڈالنے کے وقت مومن نہيں ہوتا ) صحیح بخاری حدیث نمبر ( 2475 ) ۔

زنا کبیرہ گناہوں میں سے ہے اوراس کے مرتکب کودردناک اورسخت قسم کی سزا دی جائے گی ۔

جیسا کہ حدیث معراج لمبی حدیث میں بھی مذکور ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

( ہم وہاں سے چل پڑے تو ایک تنور جیسی عمارت کے پاس پہنچے ، راوی کہتے ہیں کہ میرے خیال میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم یہ کہہ رہے تھے کہ اس میں شور وغوغا سا سنائي دے رہا تھا ، نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

ہم نے اس میں جھانکا تو اس میں مرد وعورتیں بے لباس و ننگے تھے ، اوران کے نیچے سے آگ کا شعلہ آتا تووہ شورو غوغا کرنے لگتے ، نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

میں نے ان سے سوال کیا یہ کون ہیں ؟ ۔۔۔۔۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا مجھے فرشتوں نے جواب دیا ہم آپ کو عنقریب بتائيں گے ۔۔۔۔ وہ جو مرد وعورتیں تنور جیسی عمارت میں بے لباس وننگے تھے وہ زانی اوربدکار مرد وعورتیں تھیں ) صحیح بخاری باب فی اثم الزناۃ حدیث نمبر ( 7047 ) ۔

آپ اس کی مزید تفصیل اوراہمیت کے لیے سوال نمبر ( --

3 - تیسرا مسئلہ زانی عورت جوکہ حاملہ بھی ہو سے شادی کا ہے ۔

اس کے بارے میں آپ کو علم ہونا چاہیے کہ زانیہ عورت سے شادی نہيں ہوسکتی لیکن اگر وہ توبہ کرلے تو پھر شادی کرنی جائز ہے ، اوراگر مرد اس کی توبہ کے بعد اس سے شادی کرنا بھی چاہے تو پھرایک حیض کے ساتھ استبراء رحم کرنا واجب ہے یعنی اس کے ساتھ نکاح کرنے سے قبل یہ یقین کرلیا جائے کہ اسے حمل تو نہیں اگر اس کا حمل ظاہر ہو توپھر اس سے وضع حمل سے قبل شادی جائز نہیں ۔ انتھی ۔

شیخ محمد بن ابراھیم رحمہ اللہ تعالی کا فتوی ۔ دیکھیں کتاب : الفتاوی الجامعۃ للمراۃ المسلمۃ ( 2 / 584 ) ۔

تو اس بنا پر اس عورت سے جوزنا سے حاملہ ہو شادی کرنا باطل ہے ، اورجس نے بھی اس سے شادی کی ہے اس پر واجب ہے کہ وہ فوری طور پر اس سے علیحدہ ہوجائے وگرنہ وہ بھی زانی شمار ہوگااوراس پر حد زنا قائم ہوگی ۔

پھر جب وہ اسے علیحدگی کرلے اوروہ عورت اپنا حمل بھی وضع کرلے اوررحم بری ہوجائے اورپھر وہ عورت سچی توبہ بھی کرلے توپھر وہ خود بھی توبہ کرلے تواس کا اس عورت سے شادی کرنا جائز ہوگا ۔

4 - اوررہا پہلے مرد یعنی زانی کے بارہ میں تو اس پر واجب ہے کہ اللہ تعالی کے سامنے اپنے جرم کی توبہ کرے اوراس کا اس عورت سے مطلقا شادی کرنا دو وجہ سے جائز نہیں :

اول :

اس لیے کہ وہ دونوں زانی ہیں ، اورزانی کا مومن سے نکاح حرام ہے ، آپ اس کی تفصیل کے لیے سوال نمبر ( --

دوم :

اس لیے کہ وہ عورت اس کے علاوہ کسی اورمرد سے مرتبط ہے ۔

اس وجہ سے اسے چاہیے کہ وہ اس عورت سے مکمل طور پر نظر ہٹا لے اوراس کاخیال دل سے نکال باہر کرے ، اوراللہ تعالی کے سامنے اپنے جرم عظیم سے توبہ کرے ، ولاحول ولاقوۃ الا باللہ العلی العظیم ۔

ہم اللہ تعالی سے دعا گوہیں کہ اے اللہ گمراہ مسلمانوں کوھدایت نصیب فرما ، اورانہیں اپنی طرف اچھے طریقے سے رجوع کرنے کی توفیق نصیب فرما توسب رحم کرنے والوں میں سب سے زيادہ رحم کرنے والا ہے ، والحمد للہ رب العالمین ۔

واللہ اعلم .

For More Detail Click On Page No: 1
 
 
 
Pakistan Day Celebration In Malaysia  How To Fill Out A Job Application  Anita Dongre Fashion Designer In Dubai

Warning :The information presented in this web site is not intended as a substitute for medical care. Please talk with your healthcare provider about any information you get from this web site.
© Copyright 2003-2017 www.noorclinic.com, All Rights Reserved Contact Us