Prof Arshad Javed Books In Urdu PDF Free Download
 

Forum.Noorclinic.com
Noor Clinic Pakistan Forum

 
Prof Arshad Javed Hypnotist and Clinical Psychologist
  Welcome : Guest
Login | Register | Rules
Noor Clinic| Forum | Health| Sex | General |Pakistani Matrimonial| Site Map
Procedure | Recent Post |New Topic | Most Viewed| Paigham e Quran and Hadees
  Ask A Doctor
Warning: This Website is not for people who are less than 16 years of age. Please Exit
 
Medical Forum Categories
Medical Discussion
Unmarried Boys Problems
Unmarried Girls Problem
Married Men Problem
Married Women Problem
Religion and Sex
Religion and Culture
Social Problem
General Health
Non Medical Discussion
Food & Recipes
Sports & Games
Politics
Urdu
Career and Success
Articles
Chatting
Suggestions
Women Health
Men Health
Junk and Spam
NoorClinic
Home(General)
Home(Health and Sex)
Forum Procedure
Noor Clinic Home
Baby Care
Daily Questions
    Start New Topic  My Profile
 

Divorce (safe life) please help

Religion and Culture
 
 
Msn2016 Group: Members  Joined: 07th Jan, 2016  Topic: 2  Post: 3  Age:  27  
Posted on:3rd Jan 2017, 4:03pm
 

Divorce (safe life) please help

aslam o alaikum Ma ap se eik aisa masla share karna chahta hon jin se shaid hamin eik bar phr jeenay  ki umeed ho skay. Ma ne apni wife ko talaq (divorce) de di ha. jis se ab hum dono bara roty hen preshan  hen. asal main ma talaq ni dena chahta tha to aisi batin ho gai jin se bs jo na krna tha  majbori se aur gusa se eik time main fone pe 3 bar talaq ka lafz bol diya ha. ab masla ye ha hum dono ni chorna chahty lakin talaq ke usi time hum dono ronay lag  pary aur 3,4 din ho gy hen abi aur kam hi ni bs rona hi ha.aur hum dobara wapsi  chahty hen ke koi bai jo islam ko shi janta ha hmari rehnumai kry ta ka hum gunnah  se bach skin. 1. kia eik time me 3 bar talaq fone pe ho gi ha , aur la-ilmi main di ha .pta ni tha ke eik  ya do bar deny se rajo ho jata ha. >>main na en 3,4 dino main bara sekha ha aur jo sekha ha wo 2 groups ma. eik group ehle sunnat aur dosra aur . other group > ye khty hain ke eik baar 3 talaq deny se talaq waqia ni hoi.allah ke nabi  ke zamany main eik time main 3 talaq ko 1 mana jata tha us ke hazrat umer ke dor  main 3bar talaq ko 3 smja jata .aur es liye hum 3 bar talaq ko eik hi waqt main 1 bar  khty hein aur quran main b yhi ha .aur hazray umer hmary nabi hazrat muhammad  (s.h.w) se bary to ni na es liye jo quran khta ha aur jo allah ke nabi . 2.ahle sunnat > ye khty hen ke phly aisa hi tha 3bar ko eik bar smja jata tha. aur bad main hazrat umer ne change kia 3 ko chahe wo eik hi time de hon 3 samja  jata tha,  aur kai hazrat khty hain k us waqt zamany main bi 3 bar ko 3 hi smja jata tha . >>>>ab ma usi wife se nikha krna chahta hon to  1.ahle sunnat > kty hain ke quran main halala ka zikr aya ha ke halala krna ho ga. > halala wife na kisi dosry se nikha krna ho ga tab pichly khawand nikha  ho sakta ha. aur halala main koi sharait b ni hon gi .khawaand agr chahe ga apni marzi se talaq ya  uski death ho jay yab pichlay k pas a skti ha. >> hala to esi liye karna ha ke wo pichlay ke pas a saky agr agly ko pta hi ni ha ya us  ne deni hi ni to pichla usi ka wait krta rhey ya jis majbori ke liye ke bachay hen choty  to jab bachay tab tak wsy hi bary ho jany hen ya us na deni hi ni ha to ku baitha rhy. aur wife ko to mind ma bat honi hi ha ke ma to pichly khawand ke pas jany ke liye h  kr rai hon. eik to es orat ki majbori a gai ke orat to pichlay ke pas jany ki majbori ke  liye kar rai ha . sath khty hain ke usi tra nikha ho jis tra phehli bar krna ha. aur eik aur sharat eik hadees biyan krty hain ke nabi pak (s.hw.w) ke dor main eik ort ne allah ke nabi ke  pas a ke sawal kia ke mra khawand meri khawahish ni pori ke skta aur abi tak jamah  ni kia to ma kia  to kia phly khawand ke pas chali jaon to app (s.hw.w) ne mana  farmaya k ni jab tak tum khalwat ni kro gi pichlay ka liye halal ni ho skti. >> es main eik to ye ha ke ye hadees bi to allah ke nabi ke zamany ki ha ye bi to ho  skta he ke us orat k phly khawand ne usi tra 3 bar talaq  ko eik bar talaq smj ke di ho  ku k us waqt 3 bar talaq ko 1 bar smjty thy aur 3bar talaq ke bad ye waqia huwa ho. >> aur dosri nabi pak (s.hw.w) ne us orat ko ye ni kha ke tumhara khawand jab tak  tme khud na tum ko 3 talaq de ya us ki death ho tum ni ja skti phlay ke pas , >> ye bi khty hen ke orat ka haq ha wo apny khawand se us ki razi kar ke khulaa le  skti ha. agr orat phli rat agr chahye to khawand ko haq-mehar maff kr ke us ko keh  skti ha ke ap mjy nikha se khuloo kar do azad kr do., es tra bi wo phly ke traf a skti ha. >> aur eik bar main na kisi allam se koi bat pochi to zamany ki bat hoi to khty hen ye  bi to allah ke nabi ka zamana chal ra ha.aur ma bi ye tasleem krta ho bat ku ke beshak   wo hum se pary main hen sb kuch janty aur dekhty hen.ku k wo last prophet hein en  bad koi nabi ni ay ga.aur ye zamana bi wohi ha ye unka hi zamana chal ra ha aur  zamana bi unka hi ha. lakin halat badal gay hen.ya sadyan change ho gai hen jis tra  14 sadi boht bari ha pta hi ni .esi tra unka zamana bi bara ha. >>aur us ba ka bi dar ha ke agr abi ni nikha tota to ku kisi aur ke sath halala ke liye  ye sb krwaon. >>> ab main kin ki bat manoo mra to damag pagal ho gia ha sb ki sun sun ka ke kis ke  manoo. >> ku ke mjy other walon pe yakn krna chahye ku ke jab jo ma chahta hon to ma n  manni to wo ha na jo quran ma b ho aur mra faida bi ho  >>> aur ye to sabi khty hen k allah itna rahim kareem ha ke sub kuch maff kr deta ha  agr 100 qatil bi kr ke maffi mango  to ma wakia hi allah ki ksm kha ke khta hon phly bi darta  tha es bat se aur ab bi na  chorna chahta hon aur mafiya dil se mangta hon ke ni allah sb krna chahata tha jo agr  sai sb ho jay to kbi bi ni kron ga.beshak ma zalim hi tha jo ye kia lkn aj itnay logon ke  samny apna juram pori dunya ke samny allah ke samny galti ho gai ha mjy wapis de  do plz sub kuch .ku ke bibi zalakha ne hazrat yosaf ko manga tha jo allah na jawan kar  ke ditya tha. to kia allah sb maff kr deta he ye eik ni guna kr skta . aur ma ye b daway se bat krta hon ke mary nabi pak (s.h.w.w) wo omat pyari thi to aj  hoty to zror manwa leta ro ro ke bi,aur shayed ye  qanoon bi change ho jata new  genration ko dekh ke ke jo itna bi shak ni apni wife ke sath bardasht kr skty thy wo  ksy bardasht krty ke uski wifr uski traf any ke liye halaala main nikha to quran ma ha  lakin khalwat karna. >>dostoo ye batin parh ke please ye na kena ke mujy wo baten achi lgti hen to main  wo kr lon mara maqsad ap  logon se rehnumai ha  >>ta ku humri life bach skay . please khuda ke liye hmari help kardein. ku k jis zamany ke halalay ki hades bayan karty hen wo to kar lety hain lain ya ni krty  ke us waqt talaq asy 3 bar deny se 1 bar hoti thi to ho skta ha usi liye hlala ki bi shart  asi liye asi ho , aur us ma to saff bat nazar arai ha ke es ke liye ye bat ni rakhi ke  tumhra khawand ki death ho ya talaq de. ku ke orat khud gi thi na ke ma chorna chati  hon.agr us ke sath khlwat hoti shaid ap(s.hw.w)farma dety k ap le skti ho . >> > lakin jis waja se 3 talaq 3 hoi main to asa krna bi ni chahta jis tra phly londiya ke  shath bi mubashrat ker skty thy lakin ye to ni kisi sahaba ne band ki ,ab ye ni es liye  ke ye wo zamana ni rha ,  es liye ab agr wo bi to khud change ki hen maslay to kia ab  ye masla jo es tra ka ni krty jo us waqt jis ki waja se pabandi hoi to unko ku itni bari  saza mil rai ha. aur jab allah sb maff kar skta ha ye bi to kar hi skta ha na . please ap hmari help karain ap sb ko duaon ma yad rakhy gay .thanks.


MuftiSaeed Group: Members  Joined: 03rd Jan, 2017  Topic: 0  Post: 2  Age:  41  
Posted on:4th Jan 2017, 12:12am
 

Divorce Issue

Assalaam O Alaikum

Please do not describe your personal issue openly in public, rather contact the correct personality to mediate and help counseling.

...MOD EDIT: Removed email address...
Subject: ATT ...MOD EDIT: Removed real name...

and describe your issue indetails.

JazakAllah Khair

...MOD EDIT: Removed personal particulars...

MOD NOTE: You must follow forum rule number eleven to avoid being BLOCKED.
myrizvi Group: Members  Joined: 20th Apr, 2008  Topic: 132  Post: 8207  Age:  58  
Posted on:6th Jan 2017, 5:04pm
 

divorce

1. kia eik time me 3 bar talaq fone pe ho gi ha , aur la-ilmi main di ha .pta ni tha ke eik ya do bar deny se rajo ho jata ha. >>main na en 3,4 dino main bara sekha ha aur jo sekha ha wo 2 groups ma. eik group ehle sunnat aur dosra aur . other group > ye khty hain ke eik baar 3 talaq deny se talaq waqia ni hoi.allah ke nabi ke zamany main eik time main 3 talaq ko 1 mana jata tha us ke hazrat umer ke dor main 3bar talaq ko 3 smja jata .aur es liye hum 3 bar talaq ko eik hi waqt main 1 bar khty hein aur quran main b yhi ha

Ans: yeh true hai ... aap ki aik talaq valid hogayee hai... agar 3 menses period nahi guzray to aap just rajoo karsaktay haiN... agar guzar ga.ay to new nikaah with new mahar with 2 gawaah kar saktay haiN... yeh nikaah khamoshi say bhi hosakta hai... sirf 2 gawah kafi haiN

baqi hanfi group jo kahta hai... woh quran, sunnat, hazrat AbuBakar, Hazrat Umar RA k against hai. aap onki batouN par dhayan nah dijyeh. kissi bhi ahlay hadees aalim say mazeed tafseel pooch lijyeh

HASTHIS Group: Members  Joined: 09th Sep, 2014  Topic: 0  Post: 178  Age:  33  
Posted on:6th Jan 2017, 6:10pm
 

aapki post se pata lagta hai aapke baap dada hanfi maslak se honge aapko aapke matlab ka jawab mil chuka hai.

بسم اللہ الرحمن الرحیم الجواب وباللہ التوفیق حامداً و مصلیاً و مسلما ایک مجلس میں دی گئی تین طلاقیں تین ہی واقع ہوتی ہیں اور اس کے بعد بیوی مغلظہ بائنہ ہوکر شوہر پر حرام ہو جاتی ہے، حلالہ شرعی کے بغیر اس کا پہلے شوہر سے نکاح جائز نہیں ہوتا،امام ابو جعفر الطحاوی، علامہ نووی، حافظ ابن حجر عسقلانی، علامہ بدر الدین عینی،علامہ ابن رشد المالکی، علامہ ابن الہمام الحنفی، علامہ جلال الدین سیوطی، علامہ آلوسی الحنفی، قاضی محمد بن علی الشوکانی، مشہور غیر مقلد عالم مولانا شمس الحق اور اِن کے علاوہ بہت سے محقق علماء نے حضرات صحابہ کرام، تابعینِ عظام ، ائمہ اربعہ اور سلف و خلف کے جمہور علماء، مجتہدین، محدثین کا یہی مسلک ذکر کیا ہے۔ ( شرح معانی الآثار:۳/۵۵،کتاب الطلاق، بابُ الرجل یطلق امرأتہ ثلاثاً معاً، رقم : ۴۴۷۵، شرح النووي علی مسلم:۱۰/۷۰، کتاب الطلاق، باب طلاق الثلاث، ط: دار احیاء التراث العربي، بیروت، عمدة القاری:۲۰/۲۳۳، کتاب فضائل القرآن، باب من جوز طلاق الثلاث، ط: دار احیاء التراث العربي، بیروت، فتح الباري:۹/۳۶۲، کتاب فضائل القرآن، باب من جوز طلاق الثلاث، ط:دار المعرفة، بیروت، بدایة المجتہد: ۳/۸۴،کتاب الطلاق، الباب الأول، ط: دار الحدیث، القاہرة، فتح القدیر:۳/۴۶۹، کتاب الطلاق، ط: دار الفکر، عمدة الأثاث في حکم الطلقات الثلاث، ص: ۳۳۔۔۳۷ ) ٍ ان میں سے کسی کے نزدیک بھی ایک مجلس میں دی گئی تین طلاق ایک واقع نہیں ہوتی،یہی مسلک صحیح اور قرآن و حدیث کے صریح نصوص سے ثابت ہے،جو لوگ ایک مجلس میں دی گئی تین طلاق کو ایک قرار دیتے ہیں، اُن کا مسلک نہایت کمزور اور قرآن و حدیث کے صریح نصوص کے خلاف ہے، اس کے مطابق عمل کرنا شرعا جائز نہیں ہے، اُس مسلک پر عمل کرنے کی وجہ سے مطلقہ عورت حلال نہیں ہوتی ہے، وہ بدستور اپنے شوہر پر حرام رہتی ہے، لہذا صورت مسئولہ میں اگر ”شخص مذکور “ نے اپنی بیوی کو ایک ہی مرتبہ میں تین مرتبہ طلاق دے دی ہے، تو اُس پر تینوں طلاقیں واقع ہوگئیں اور وہ اپنے شوہر پر حرام ہوگئی ، اب دونوں کے مابین حلالہ شرعی کے بغیر دوبارہ نکاح کی کوئی صورت نہیں ہے۔ ذیل میں جمہور کے مسلک کے دلائل ذکر کیے جاتے ہیں: (۱) اللہ تعالی کا ارشاد ہے :فان طَلَّقَہَا، فَلا تَحِلُّ لَہ مِن بَعدُ حَتّٰی تَنکِحَ زَوجاً غَیرَہ ۔ اِس آیت سے پہلے”الطلاق مرتان الخ“ کا ذکر ہے، پوری آیت کا حاصل یہ ہے کہ اللہ تعالی فرمارہے ہیں کہ اگر دوطلاق دینے کے بعد فوری طور پر تیسری طلاق بھی دیدی، تو اب وہ عورت طلاق دینے والے مرد کے لیے اُس وقت تک حلال نہیں ہوگی جب تک کہ وہ شرعی ضابطے کے مطابق دوسرے مرد سے نکاح نہ کر لے اور پھر وہ دوسرا شخص نکاح و ہم بستری کے بعد اس کو طلاق نہ دیدے، تو عدت کے بعد یہ عورت پہلے شوہر کے لیے حلال ہوجائے گی۔ یہ آیت ایک مجلس میں دی گئی تین طلاق کے تین واقع ہونے کے بارے میں صریح ہے ،ا ِس لیے کہ اس آیت میں دو طلاق کے بعد اللہ تعالی نے لفظ ”فاء“ کے ذریعے تیسری طلاق کا ذکر کیا ہے، جس کا ظاہری اور صاف مطلب یہ کہ اگر کوئی شخص دو طلاق دینے کے فوری بعد ایک ہی مجلس میں تیسری بھی طلاق دیدے، تو تینوں طلاقیں واقع ہوجائیں گی، چنانچہ حضرت امام شافعی اِس آیت سے تین طلاق کے واقع ہونے پر استدلال کرتے ہوئے فرماتے ہیں: ”فالقرآن واللّٰہ أعلم یدل علی أن من طلق زوجة لہ دخل بہا أو لم یدخل بہا ثلاثاً، لم تحل لہ حتی تنکح زوجا غیرہ“۔ (کتاب الأم: ۵/۱۹۶، أبواب متفرقة في النکاح والطلاق، طلاق التي لم یدخل بہا، ط: دار المعرفة، بیروت )” یعنی: قرآن کریم کا ظاہر اس بات پر دلالت کرتا ہے کہ جس شخص نے اپنی بیوی کو تین طلاقیں دیدیں، خواہ اُس نے اس سے ہم بستری کی ہو یا نہ کی ہو، تو وہ عورت اُس شخص کے لیے حلال نہیں ہوگی جب تک کہ وہ کسی مرد سے نکاح نہ کر لے“ حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ، امام بیہقی ، ابن حزم ظاہری، علامہ قسطلانی، علامہ عبد الحی لکھنوی اور غیر مقلد عالم مولانا ابراہیم صاحب سیالکوٹی نے بھی اِس آیت سے ایک مجلس میں تین طلاق کے تین واقع ہونے پر استدلال کیا ہے۔ ( السنن الکبری :۷/۵۴۴، باب ماجاء فيامضاء الطلاق الثلاث وان کن مجموعات، ط: دار الکتب العلمیة، بیروت، لبنان، المحلی بالآثار لابن حزم:۹/۳۹۴،کتاب الطلاق، ط: دار الفکر، بیروت۔عمدة الاثاث في حکم الطلقات الثلاث، ص: ۵۲، ۵۳، ط:مکتبہ صفدریہ، پاکستان،بحوالہ مجموعة الفتاوی:۴/۴۹۵، اخبار اہل حدیث، ۱۵ نومبر ۱۹۲۹ء، ارشاد الساری للقسطلانی:۸/۱۵۷،ط:مصر ) (۲) عن عائشة رضي اللّٰہ عنہا أن رجلاً طلق امرأتہ ثلاثاً، فتزوجت، فطلق، فسئل النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم أتحل للأول؟ قال: لا حتی یذوق عُسَیلتہا کما ذاق الأولُ۔ (البخاري،کتاب الطلاق، باب من أجاز طلاق الثلاث، رقم: ۵۲۶۱ ) حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ ایک شخص نے اپنی بیوی کو تین طلاقیں دیں ، اُس عورت نے دوسرے شخص سے نکاح کر لیا ، دوسرے شخص نے بھی اس کو طلاق دیدی ، تو حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا گیا کہ یہ عورت پہلے شخص کے لیے حلال ہوگئی ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : نہیں!جب تک پہلے شوہر کی طرح دوسرا شوہر بھی اس کا ذائقہ نہ چکھ لے ( یعنی صحبت نہ کر لے )۔ اِس حدیث میں” طَلَّقَ امرأتہ ثلاثاً “کے جملے سے یہ بات صراحتا معلوم ہوتی ہے کہ اِس حدیث میں تین طلاقیں اکھٹی اور ایک مجلس میں دینے کا ذکر ہے،، جس میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تینوں طلاق کے واقع ہونے کا فیصلہ فر مایا ہے، چنانچہ حافظ ابن حجر اور علامہ بدر الدین عینی رحمہما اللہ نے بھی اِس حدیث کا یہی مطلب بیان کیا ہے اور امام بخاری رحمة اللہ علیہ نے بھی” صحیح بخاری“ میں ، نیز امام بیہقی  نے ”السنن الکبری “میں ایک مجلس کی تین طلاق کے وقوع پر اسی حدیث سے استدلال کیا ہے، امام بخاری نے اِس حدیث پر یہ باب قائم کیا ہے، ”باب من أجاز طلاق الثلاث“ اور امام بیہقی نے یہ باب قائم کیا ہے: ”باب ما جاء في امضاء الطلاق الثلاث وان کن مجموعات“ ۔ (۳) عن عائشة رضي اللّٰہ عنہا أنہا سألت عن الرجل یتزوج المرأة، فیطلقہا ثلاثاً، فقالت: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم : لا تحلُّ للأول حتی یذوق الآخر عسیلتہا و تذوق عسیلتہ۔ (صحیح مسلم،با ب لا تحل المطلقة ثلاثاً حتی تنکح زوجاً غیرہ، رقم:۱۴۳۳، السنن الکبری للبیہقي،واللفظ لہ، کتاب الرجعة، باب نکاح المطلقة ثلاثاً، رقم: ۱۵۱۹۳) حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا سے سوال کیا گیا کہ کوئی شخص ایک عورت سے نکاح کرتا ہے ،اس کے بعد اُس کو تین طلاق دے دیتا ہے ؟ انہوں نے فرمایا کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ وہ عورت اُس شخص کے لیے حلال نہیں ہے جب تک کہ دوسرا خاوند اُس کا ذائقہ نہ چکھ لے (صحبت نہ کرلے ) ، جس طرح کہ پہلا خاوند اُس کا ذائقہ چکھ چکا ہے ( صحبت کر چکا ہے) ۔ اس حدیث میں بھی ” ثلاثاً“ کا لفظ اِس بارے میں صریح ہے کہ اگر کوئی شخص ایک مجلس میں تین طلاق دیدے، تو تینوں طلاقیں واقع ہوکر بیوی مغلظہ بائنہ ہوجاتی ہے، یہی روایت دار قطنی میں اس طرح آئی ہے: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: اذا طلق الرجل امرأتہ ثلاثاً، لم تحل لہ حتی تنکح زوجاً غیرہ، ویذوق کل واحد منہما عسیلة صاحبہ۔ ( سنن الدار قطني، کتاب الطلاق، رقم: ۳۹۷۷ ) یعنی :آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ جب مرد اپنی بیوی کو تین طلاق دیدے، تو وہ اُس کے لیے حلال نہیں ہوگی جب تک کہ دوسرے مرد سے نکاح کر کے دونوں ایک دوسرے کا ذائقہ نہ چکھ لیں۔ (۳) امام بخاری نے صحیح بخاری میں حضرت عویمر عجلانی رضی اللہ عنہ کے لعان کا واقعہ نقل کیا ہے، اُس واقعے میں ہے: ”کذبت علیہا یا رسول اللّٰہ ان أمسکتہا، فطلقہا ثلاثاًقبل أن یأمرہ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم “ یعنی: لعان کے بعد حضرت عویمر رضی اللہ عنہ نے حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا : یا رسول اللہ!اگر اب بھی میں اس عورت کو اپنے گھر میں رکھوں ، تو گویا میں نے اُس پر جھوٹا بہتان باندھا، یہ کہہ کر انھوں نے حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم دینے سے پہلے ہی تین طلاقیں دے دیں۔ علامہ کوثری فرماتے ہیں: کسی بھی روایت میں یہ مذکور نہیں ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اُن پر نکیر فرمائی ہو ۔ اس سے صاف معلوم ہوا کہ وہ تینوں طلاقیں واقع ہو گئیں، اور لوگوں نے بھی اس سے تین طلاق کا وقوع سمجھا ، اگر لوگوں کا سمجھنا غلط ہوتا ، تو حضور اقدس صلی اللہ علیہ وسلم ضرور اُن کی اصلاح فرماتے اور لوگوں کو غلط فہمی میں نہ رہنے دیتے ، پوری امت نے اس روایت سے یہی سمجھا ہے ، حتی کہ علامہ ابن حزم نے بھی یہی مطلب سمجھا ہے ، چنانچہ انھوں نے فرمایا: ”انما طلقہا و ہو یقدر أنہا امرأتہ ولو لا وقوع الثلاث مجموعة لأنکر ذلک علیہ“۔ ( فقہی مقالات:۳/۱۹۱، بحوالہ الاشفاق علی أحکام الطلاق، ص: ۲۹) یعنی: اگر دفعة ایک مجلس میں تین طلاق کا شرعا اعتبار نہیں ہوتا اور تین طلاقیں ایک طلاق تصور کی جاتی ، تو اس سلسلے میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم ضرور حکم ارشاد فرماتے اور کسی طرح خاموشی اختیار نہیں فرماتے، جب آپ نے اس پر سکوت اختیار کیا ، تو یہ اس بات کی یقینی دلیل ہے کہ گویا آپ نے تین طلاق کو نافذ قرار دیا، اس کی تایید ابو داوٴد میں حضرت سہل بن سعد رضی اللہ عنہ کی روایت سے بھی ہوتی ہے، جس کے الفاظ یہ ہیں: ” عن سہل بن سعد قال :فطلقہا ثلاث تطلیقات عند رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ، فأنفذہ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم الخ“۔ ( سنن أبی داوٴد، باب في اللعان، رقم: ۲۲۵۰ ) یعنی: ”حضرت عویمر رضی اللہ عنہ نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے سامنے اپنی بیوی کو تین طلاقیں دے دیں اور آپ نے اُن کو نافذ کردیا“۔ (۵) عن محمود بن لبید قال:أخبر رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم عن رجل طلق امرأتہ ثلاث تطلیقات جمیعاً، فقام غضباناً۔ ثم قال: أیلعب بکتاب اللّٰہ وأنا بین أظہرکم ،حتی قام رجل وقال: یا رسول اللّٰہ ألا أقتلہ؟ ( سنن النسائي، کتاب الطلاق، الثلاث المجموعة و مافیہ من التغلیظ، رقم: ۳۴۰۱ ) حضرت محمود بن لبید رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ اطلاع ملی کہ ایک شخص نے اپنی بیوی کو اکھٹی تین طلاقیں دے دیں، آپ اس پر غصے میں اٹھ کھڑے ہوئے ، پھر آپ نے ارشاد فرمایا کہ کیا میری موجودگی میں اللہ تعالی کی کتاب سے کھیلا جارہا ہے ؟ حتی کہ ایک شخص کھڑا ہوا اور اُس نے کہا کہ حضرت !کیا اس شخص کو قتل کردوں؟ اس حدیث کو حافظ ابن القیم، علامہ ماردینی، حافظ ابن کثیر اور حافظ ابن حجر نے سند کے اعتبار سے صحیح قرار دیا ہے (عمدة الاثاث، ص: ۲۷، بحوالہ زاد المعاد لابن القیم:۴/۵۲،الجوہر النقي للماردیني:۷/۳۲۳، نیل الاوطار:۶/۲۴۱، بلوغ المرام لابن حجر العسقلانی، ص:۲۲۴ ) اس حدیث میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا تین طلاق دینے پر ناراض ہونا اس بات کی واضح دلیل ہے کہ ایک مجلس میں تین طلاق دینے سے تین ہی طلاق واقع ہوتی ہیں، ورنہ آپ اس قدر ناراضگی کا اظہار نہیں فرماتے اور امام نسائی نے اس حدیث پر جو باب قائم کیا ہے، یعنی: ”الثلاث المجموعة و مافیہ من التغلیظ“ ، اس سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ بھی اس حدیث سے یہی ثابت کرنا چاہ رہے ہیں کہ ایک مجلس کی تین طلاق تین ہی واقع ہوتی ہیں۔ (۶) طبرانی نے حضرت عبد اللہ ابن عمر رضی اللہ عنہما کا اپنی بیوی کو حالت حیض میں طلاق دینے کا تفصیلی واقعہ ذکر کیا ہے ، اُس واقعے کے آخر میں یہ الفاظ بھی ہیں:” یا رسول اللّٰہ ! لو طلقتہا ثلاثاً، کان لي أن أراجعہا ؟ قال: اذا بانت منک وکانت معصیة“ یعنی: ” حضرت عبد اللہ ابن عمر رضی اللہ عنہما نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا یا رسول اللہ! اگر میں اپنی بیوی کو تین طلاقیں دے دیتا ، تو کیا میرے لیے رجوع کا حق تھا ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : تب تو وہ تم سے بائنہ ہوجاتی اور یہ گناہ بھی ہوتا “ یہ حدیث بھی سند کے اعتبار سے صحیح ہے ، بعض لوگ اس حدیث کو سند کے اعتبار سے ضعیف قرار دیتے ہیں، وہ علامہ ہیثمی کے قول سے استدلال کرتے ہیں کہ علامہ ہیثمی نے ” مجمع الزوائد“ میں اس حدیث کے بارے میں لکھا ہے : ” رواہ الطبراني، وفیہ علي بن سعید الرازي، قال الدار قطني: لیس بذاک، و عظمہ غیرہ، و بقیة رجالہ ثقات “(مجمع الزوائد:۴/۳۳۶، کتاب الطلاق، باب طلاق السنة وکیف الطلاق، رقم: ۷۷۶۷، ط: مکتبة القدسي، القاہرة ) یعنی: علامہ طبرانی نے اس حدیث کو نقل کیا ہے اور اس کے ایک راوی ” علی بن سعید الرازی“ ہیں، جن کے بارے میں دار قطنی فرماتے ہیں: ” لیس بذاک“ ؛ البتہ دوسرے حضرات نے ان کی تعظیم و توقیر کی ہے اور ان کے علاوہ باقی رجال ثقہ ہیں“ لیکن دار قطنی نے علی بن سعی الرازی کے بارے میں جو ” لیس بذاک “ فرمایا ہے، اس کے بارے میں علامہ ذہبی ”میزان الاعتدال“ میں فرماتے ہیں: ”حافظ رحَّالٌ جوالٌ، قال الدار قطني: لیس بذاک، تفرد بأشیاء۔ قلت: سمع جبارة بن مغلس، وعبد الأعلی بن حماد۔ روي عنہ الطبراني والحسن بن رشیق والناس ۔ قال ابن یونس: کان یفہم و یحفظ “ ( میزان الاعتدال: ۳/۱۳۱، حرف العین، رقم: ۵۸۵۰، ط: دار المعرفة، بیروت ) یعنی: علی بن سعید الرازی حافظ الحدیث اور بہت زیادہ سفر کرنے والے تھے ۔ امام دار قطنی نے اُن کے بارے میں” لیس بذاک“ جو کہا ہے، یہ اُن کے تفردات میں سے ایک ہے ۔ میں یہ کہتا ہوں کہ انہوں نے ”جبارہ بن المغلس“ اور” عبد الاعلی بن حماد “ سے احادیث لی ہیں اور علامہ طبرانی اور حسن بن رشیق اور بہت سے لوگوں نے اُن سے احادیث روایت کی ہیں ۔ ابن یونس اُن کے بارے میں فرماتے ہیں کہ یہ حدیث سمجھتے اور اُس کو یاد کرلیا کرتے تھے “ علامہ ذہبی کے مذکورہ قول سے معلوم ہوا کہ” دار قطنی “ کے علاوہ کسی اور نے ان کے بارے میں کلام نہیں کیا ہے اور خود” دار قطنی“ نے بھی نرم الفاظ میں کلام کیا ہے اور حافظ ذہبی اُن کے اس کلام پر راضی نہیں ہیں اور اسماعیل بن یونس نے اُن کو ثقہ قرار دیا ہے اور حافظ ذہبی نے اُن کو” حافظ“ کہا ہے ، لہذا بعض لوگوں کا اِس راوی کی وجہ سے اس روایت کو رد کرنا صحیح نہیں ہے، ایک مجلس میں تین طلاق کے تین واقع ہونے پر اس حدیث سے استدلال کرنا بلا شبہہ صحیح ہے۔ (۷) عن نافع بن عجیر أن رکانة بن عبد یزید طلق امرأتہ ”سہیمة“ البتة، فأخبر النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم بذلک، وقال:واللّٰہ ما أردت الا واحدة ً، فقال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم : واللّٰہ ما أردتَ الا واحدةً ؟ فقال: رکانة: واللّٰہ ما أردتُ الا واحدة ، فردہا الیہ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم ، فطلقہا الثانیة في زمان عمر والثانیة في زمان عثمان۔ (سنن أبي داوٴد، کتاب الطلاق، باب في البتة، رقم: ۲۲۰۶،وقال أبو داوٴد: ہذا أصح من حدیث ابن جریج أن رکانة طلق امرأتہ ثلاثاً؛ لأنہم أہلُ بیتہ، وہم أعلم بہ ) حضرت نافع بن عجیر فرماتے ہیں کہ حضرت رکانہ بن عبد یزید رضی اللہ عنہ نے اپنی بیوی ” سہیمہ“ کو ”بتہ“( تعلق قطع کرنے والی ) طلاق دے دی ، اُس کے بعد انھوں نے حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو خبر دی اور آپ سے کہا:بخدا میں نے صرف ایک ہی طلاق کا ارداہ کیا ہے ، اس پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا کہ کیا حقیت میں بخدا تو نے ایک ہی طلاق کا ارداہ کیا ہے ؟ حضرت رکانہ نے کہا : اللہ تعالی کی قسم میں نے صرف ایک ہی طلاق کا ارادہ کیا ہے ، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اُن کی بیوی کو اُن کے ساتھ رہنے کی اجازت دے دی ، پھر حضرت رکانہ نے دوسری طلاق حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے عہد خالفت میں اور تیسری طلاق حضرت عثمان رضی اللہ کے عہد خلافت میں دی ۔ اس حدیث سے معلوم ہوا کہ ایک مجلس میں تین طلاق دینا شرعا معتبر ہے ، اس لیے کہ اگر ایک مجلس کی تین طلاق تین واقع نہیں ہوتی، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم حضرت رکانہ کو قسم دے کر ایک طلاق دینے کی تصدیق کیوں فرماتے؟لفظ ”بتہ“ چونکہ تین کا بھی احتمال رکھتا ہے، یعنی اس لفظ کو بول کر تین طلاق کی بھی نیت کرنا صحیح ہے ، اس لیے آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اُن کو قسم دی ، اگر تین کے بعد رجوع کا حق ہوتا اور تین طلاق ایک سمجھی جاتی، تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم حضرت رکانہ کو قسم نہیں دیتے؛ بلکہ ایسے ہی رجوع کا فیصلہ فرمادیتے۔ (۸) عن ابن عمر أن رجلا أتی عمر رضي اللّٰہ عنہ، فقال: اني طلقت امرأتي، یعني: البتة، قال: عصیت ربک، ففارقت امرأتک، فقال الرجل:فاِن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم أمر ابن عمر رضي اللّٰہ عنہما حین فارق امرأتہ أن یراجعہا، فقال لہ عمر رضي اللّٰہ عنہ: ان رسو ل اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم أمرہ أن یراجع امرأتہ لطلاق بقي لہ، وانہ لم یبق لک ما ترتجع بہ امرأتک۔ ( السنن الکبری للبیہقي، کتاب الخلع والطلاق، باب ما جاء في امضاء الطلاق الثلاث وان کن مجموعات، رقم: ۱۴۹۵۶) حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ ایک شخص حضرت عمر رضی اللہ کے پاس آیا اور اُس نے کہا کہ میں نے حیض کی حالت میں اپنی بیوی کو بتی ( تعلق قطع کرنے والی اور یہاں مراد تین طلاق ہیں ) طلاق دے دی ہے ، حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے فرمایا کہ تو نے اپنے پروردگار کی نافرمانی کی اور تیری بیوی تجھ سے بالکل الگ ہوگئی ،اُس شخص نے کہا کہ حضرت عبد اللہ بن عمر رضی ا للہ عنہ کے ساتھ بھی بالکل ایساہی واقعہ پیش آیا تھا؛ مگر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تو اُن کو رجوع کا حق دیا تھا ، اس پر حضرت عمر رضی اللہ نے اُس سے فرمایاکہ بلا شبہہ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت عبد اللہ کو یہ حکم دیا تھا کہ وہ اپنی بیوی سے رجوع کر لیں اور اس کی وجہ یہ تھی کہ اُن کی طلاق باقی تھی اور تمہارے لیے تو اپنی بیوی سے رجوع کا حق نہیں ؛ اس لیے کہ تمہاری طلاق باقی نہیں ہے ۔ حضرت عبد اللہ بن عمر رضی اللہ نے اپنی بیوی کو ایک طلاق دی تھی ، اس لیے اُن کے لیے رجوع کا حق محفوظ تھا اور مذکورہ شخص نے چونکہ اپنی بیوی کو تین طلاق دیدی تھی، اس لیے اس کے لیے رجوع کا حق ختم ہوگیا تھا، اسی لیے حضرت عمر رضی اللہ نے اُس سے فرمایا کہ تم رجوع نہیں کرسکتے ۔ اس واقعے سے معلوم ہوا کہ حضرت عمر رضی اللہ عنہ اس حکم کو حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے حکم سے ماخوذ سمجھتے تھے ، جیساکہ حدیث کے الفاظ سے یہ بات بالکل ظاہر ہے ۔ (۹) کان عبد اللّٰہ اذا سئل عن ذلک قال: لأحدہم: أما أنت ان طلقت امرأتک مرةً أو مرتین، فان رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم أمرني بہذا، وان کنت طلقتہا ثلاثاً، فقد حرمت علیک حتی تنکح زوجا غیرک، و عصیت اللّٰہ فیما أمرک من طلاق امرأتک ۔ ( صحیح مسلم ، کتاب الطلاق، باب تحریم طلاق الحائض بغیر رضاہا، رقم: ۱۴۷۱) حضرت عبد اللہ ابن عمر رضی اللہ عنہما سے جب کوئی شخص حیض کی حالت میں طلاق دینے سے متعلق معلوم کرتا، تو آپ اُس سے فرماتے کہ اگر تم نے اپنی بیوی کو ایک یا دو طلاقیں دی ہیں ، تو بیشک آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس صورت میں مجھے رجوع کا حکم دیا تھا اور اگر تم نے اپنی بیوی کو تین طلاقیں دی ہیں ، تو یقینا وہ تم پر حرام ہوگئی ہے جب تک کہ وہ تمہارے علاوہ کسی دوسرے شخص سے نکاح نہ کر لے اور اس طرح تم نے اپنی بیوی کو تین طلاق دے کر اللہ کی نافرمانی کی ہے ۔ اس روایت سے بھی معلوم ہوا کہ تین طلاق کے بعد کوئی گنجائش باقی نہیں رہتی اور عورت اپنے شوہر پر حرام ہوجاتی ہے ، اس روایت سے یہ بھی معلوم ہوا کہ ایک اور دو طلاق کے بعد رجوع کا حکم تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت ہے ؛ لیکن تین طلاقوں کے بعد رجوع کا حکم آپ صلی اللہ علیہ و سلم سے ثابت نہیں ہے ، ورنہ حضرت ابن عمر رضی اللہ عنہما اس کا حوالہ ضرور دیتے اور اس کا خلاف فتوی دینے کی ہر گز جرء ت نہیں کرتے ۔ حضرت علی، حضرت حسن بن علی، حضرت عبد اللہ بن عباس، حضرت ابو ہریرہ، حضرت عبد اللہ بن مسعود ، حضرت عمران بن حصین، حضرت ابوموسی اشعری، حضرت عبد اللہ بن عمرو بن العاص رضی اللہ عنہم اور امام جعفر بن محمد سے بھی صراحتا یہ بات ثابت ہے کہ ایک مجلس میں دی گئی تین طلاق تین ہی شمار ہونگی۔ ان سب حضرات کے اقوال کی تفصیل کے لیے دیکھیے: عمدة الاثاث فی حکم الطلقات الثلاث، ص: ۶۶۔۔۷۵۔ مذکورہ دلائل سے معلوم ہوا کہ ایک مجلس میں دی گئی تین طلاق تین ہی واقع ہوتی ہیں، قرآن و حدیث، حضرات صحابہ کرام ، تابعین عظام اور سلف و خلف کے جمہور علماء کا یہی متفقہ مسلک ہے، قرآن و حدیث اور حضرات صحابہ کرام کے اقوال تو تفصیل سے بیان کیے جاچکے ، اب چند اہم فقہاء کے اقوال بھی ملاحظہ فرمائیں: علامہ ابن الہمام فرماتے ہیں: ذہب جمہور الصحابة والتابعین ومن بعدہم من أئمة المسلمین الی أنہ یقع ثلاثاً ۔ ( فتح القدیر:۳/۴۶۹، کتاب الطلاق، ط: دار الفکر )”جمہور حضرات صحابہ کرام، تابعین اور ائمہ مسلمین کا یہی مسلک ہے کہ تین طلاقیں تین ہی واقع ہونگی“۔ علامہ بدر الدین عینی فرماتے ہیں: ”ومذہب جماہیر العلماء من التابعین ومن بعدہم منہم: الأوزاعي والنخعي والثوري، و أبو حنیفة وأصحابہ، ومالک و أصحابہ، والشافعي وأصحابہ، وأحمد و أصحابہ، و اسحاق و أبو ثور و أبو عبید وآخرون کثیرون علی أن من طلق امرأتہ ثلاثاً، وقعن؛ولکنہ یأثم“۔ ( عمدة القاری:۲۰/۲۳۳، کتاب فضائل القرآن، باب من جوز طلاق الثلاث، ط: دار احیاء التراث العربي، بیروت ) ”جمہور علماء جن میں تابعین، تبع تابعین، حضرت امام اوزاعی، امام نخعی، امام ثوری، امام ابوحنیفہ اور اُن کے اصحاب، امام مالک اور اُن کے اصحاب، امام شافعی اور اُن کے اصحاب، امام احمد اور اُن کے اصحاب، امام اسحاق بن راہویہ، امام ابو ثور، امام ابو عبیدہ وغیرہ کا یہی مسلک ہے کہ جو شخص اپنی بیوی کو تین طلاق دیدے، تو تینوں طلاقیں واقع ہو جائیں گی؛ البتہ اس کی وجہ سے وہ گنہگار ہوگا“لہذا صورت مسئولہ میں اگر شخص مذکور نے اپنی بیوی کو ایک مرتبہ میں تین طلاق دیدی ہے، تو اُس کی بیوی پر تینوں طلاقیں واقع ہوگئیں اور بیوی مغلظہ بائنہ ہوگئی،جیساکہ اس کے دلائل تفصیل سے ماقبل میں بیان کر دیے گئے، جو لوگ تین طلاق کو ایک شمار کرتے ہیں، اُن کا قول قطعا غلط ہے۔ فقط واللہ تعالی اعلم بالصواب کتبہ
Msn2016 Group: Members  Joined: 07th Jan, 2016  Topic: 2  Post: 3  Age:  27  
Posted on:15th Jan 2017, 11:40pm
 

HASTHIS sahib

Assalaam O Alaikum
Dosto ma ap sub ka bohat sukar guzar hon jinhon na meri help ke liye
apna qimati waqt nikala.ma ap sb ka boht boht sukria ada krta hon .aur
ap sab ne meri rehnumai karnay ki koshish ki aur ap sab na sahi
farmaya ha.
Mera ap sub tak apni bat share karny ka maqsaq koi intishar phelana ni
ha. ma bs apni rehnumai ke liye ap sub doston se apni personal bat
share ki ha ta ke koi sahi hal nikal ay.
HASTHIS sahib :
ap ne sahi farmaya ke ma eik alhe sunnat famiy se taluq rakhta hon.aur
ma asal ma yhi hal chahta hon aur jab tak meri achi tra tasali ni ho jati
ma koi b aisa qadam ni uthaon ga.
bs yhi samjain ke ma bi tak koi maslik ma ni hon just muslim.aur sbi
maslik baiyon se rehnumai chahta hon.aur eik bar par khta hon mera
koi intishar phelana maqsad ni ha .ku ka ma islam sahi mano se chahta
hon.to sbi ki bat sunni ho gi es divorce ke mamlay main.
HASTHIS sahib : dekain insan jis maqsad ma gira hota ha wo esi ke hal
ke liye har koshish krta he jis ma jab tak us ke liye koi hal ni nikl ata jis
ma us ki koi tasali nhi ho jati .aur insan hamesha wohi chahta ha jo us
ki khud khawahish > matlib ma chahta hon ma us ko ni chorna
chahta to saaf zahir ha mjy b wohi bat achi lgy gi jo bhai khty hen ke 3
talaq ko 1 . eik punjabi ke example ha bemar ko lui(razai , bistar)
sakhati ha.matlib( jo bemar ha us ko to bestar hi acha lagta ha ) .es tra
mjy b yhi achi lagti ha ke jo mery haq ki bat ho gi.
dakein mera matlib naoz billah koi galt matlib ni ha kisi allah ke nabi
pak(s.a.w) ki ya kisi be allah ke naik banday ki bat ko galt ya koi asa
smjna jo sirf apny matlib ki ha . meshak jitni b mery matlib ki ho me na
to ye dekhna he k jo bat shareyat ki ho k shareyat kia khti ha.
aplogon se rehnumai es liye chahta hon ke aj to kr lon ga jo mera dil
khta he lakin kal ko allah ke nabi (s.a.w)ko kia moun dekhaon ga.agr
yahi karna hota to ma kr leta. bs jab tak tasaali ni ho jato jo ma ap se
batin pochna chahta hon wo ma kuch ni krna chahta .es liye
ke agr 3 talaq ko waqia hi 1 ha to halala ke liye nikkha ku krwaon.
1.>> HASTHIS sahib .thek ma smajta hon ke 3 talaq ho gi to halala ki
tarf rajo karna chahta hon.
>>asal ma halala kia chez ha es ka to allah ne quran ma farmaya ha agr
orat phly khawand ke pass ana chahti ha to halala kry.
HASTHIS sahib>> halala ke bary main jo ahle sunat ke allam deen se jo
jo batin suni hen wo alag alag hen
koi khty hen halala kisi se nikha ho ga aur usi tra ho ga orat apna mind
saaf kr ke kry gi.aur koi sharat ni ho gi .khawand ko pata ni ho ga aur
khawand ko khud kbi kisi mamlay talaq de ya us ki death ho jay phr wo
wapis phly ke pas ay gi.
>jab us ko pata hi ni ha to halala kis bat ka nam ha .wo to esi liye kia
jata ha k phly ke pas any ke liye.
dekain insan ke andar gussa b paya jata ha, thek ha gusa aya aur ho gia
lkn ni krna chahye tha ku gusa haram ha .matlib ho gia kisi majbori ma
koi shok se ni huwa ye personal metor ha .bs glti ho gi to ab islam ne
es ka hal bta deya ha.
dakin dono ko es bat ka ehsas huwa ke galt ho gia dono pachta ray
hen.to saff zahir ha agr kisi alam deen se pocha to us ne bataya halala
krna ha .to pta to dono ko chal gia na ke halala krna ha aur kis majbori
se ke phly ke pas ana ha.phly ke pas ku ana he mard ko to allah ne 3
shadi eik sath karny ki b ajazat de ha , to chalo agr talaq ho gai 3 ni kr
skta to aur kar lon.asi konsi majbori ha ke ab halala kry aur asi saza
oart ko milay jo kisi aur ke sath nikah kry aur phr ay aur mard ko bi ye
bat to kabi ni pasand beshak hala kam ha nika lakin bs allah na saza di
ha na . to wo lany k liye tayar hen.konsi majbori ha ho skta ha gusa se
to ho gai ab soch i ke hmaru choty bachy hen ya dono ma aisa payr ha
ke ab ni kisi sorat ma bardasht kar sakty ke chor dain.phly ku chora
zrori ye bat bi ni ke un dono ma hi galt ho to talaq ho gi ho ajkal logon
maitni tenssion pai jati hen ho skta he ke us ke gar ma kisi na majbor
kia ho,to phr jab ho gia to pata chala ke ye kia ho gia ha.aur ab wo
akhaty hona chahty hen to un ko to wohi acha lagta ha na jo khty hen k
abi ni hoi talaq.
aur jab ye dono ma bat ho gi orat khti ha m kr lon gi halala to krna orat
nay ha matlib bat ho gi,ab agy jis se karna ha to agr usko pata hi ni aur
orat to us de sath us ke mind ma ha ke ma to halala kr rai hon,aglay ko
ni pata to orat usy batati b ni lakin orat ka mind zror pichlay khawand
ki traf ho ga to es tara ksy un ki zindgi sai guzry gi ku k khty jo hen ke
khawand agr khud talaq de ga ya death ho jay us ki , to es tara to us
khawand ke sath bi ziadti ni ha ke jis ko pata hi ni ke us ki wife ku
chup chup ha us ka mind khin aur lga huwa ha to us ko be preshani
aur shok ho ga ksy agr wo tala q bi na de to us ke sath achi tra guzar
sakay gaku ke orat to es liye majbor h us ke bachay hen aur saza bi
bugat rai ha .aur jin bachon ke liye gai ha wo agr wasy hi tab tak jawan
ho jany hen ya pichlay na krni hi ni k ma n us ke sath krni ha to halala
kia ha phr?.kia mjbori ha orat ko bi ku ma ma ni bri ortain dekhin hen
jin ki olad hoti ha aur divorce ho jata ha aur wo bechari agy ni karti sirf
apni olad ke liye wait karti rehti hen ke kbi olad to un ko le ke ja hi
sakti ha na beshak alag hi ku ni.
>>aur agr wo us ko bta deti ha ke ye mri majbori ha ma n majbori ke
sath kia he to ho skta ha wo usko talaq de dy un ki majbori samj ke aur
wo phr se mil jain eik ho jain .to said jo jorta ha us ko b sawab mil
jay.jab btana hi ni to mumkin ksy .
>>aik se pocha h ahle sunnat to khty hen ye orat pe ha us waqr shart ni
rakhni aur orat nikha ke bad khy ke ap mjy nikha se azad kr do ma
apko haq mehr maff kar deti hon. to wo azad kar sakta ha.
>>eik ahle sunnat kahty hen ka orat us ke sath nika ke bad khalwat
kary aur usko bata de to wo chor de beshak usi waqt .
>>ahly suunat ke aik madaris ma dekha ke unhon ne halalay karny ke
liye baba rakha huwa ha wo nikha karta ha aur alam deen hi rasta
dekaty hen ke ap us ke sath shart na rakho(khawand)koi aur us se bat
kry hum ne halala krna ha aur us ko paisy de dety he to khalwat ke
bagir talaq de deta ha .
>> to ye bi to rasta alame deen hi dekhaty hen aur bad ma khna ke
hum na guna apny sar pa le lia ha
>>es bat ko dekh ke ma mjbor b kbi kbi ho jata hon ke jo khty hen 3 ko
us waqt eik tha ye koi khel ni k 2 khandan taba ho jaty hen bs 1 second
ma,aur allah ko dekain ke allah koi sakhti karta ha apny bandon par
islam main har bat asani rakhi ha aur 1 min se pahly tabah ho jata ha
gusa se sab kuch.
dakin allah to maff karny wala ha agr ma khon ke allah 100 qatil ki eik
maffi pa maff kar deta ha ,aur jab insan muslim ni hota sari life guna
karta ha to eik bar kalma par ke muslim ho jata ha to allah pichlay
sary maff kar deta ha .
aur hum muslim hen na agr main ye khon jin logon ye kha ha e us
time b 3 to 1 mana jata tha aur halala ko wo khty hen halaal koi heela
karna ni ha ke soda bazi ke halala bta ke kro wo khty hein halala ka
mtlib sharat ke bgair aur jab khawand khud us ko talaq na de dy ya us
ki death na ho jay to oart phly ke liye halaal ni ha ye eik byan ha un
sab ka.
agr eik min ma ye khon ma ye bat un ki man leta hon to bad ma ma phr
ahle sunnat ho jata hon ku k wo b mulim hen ap b , maslik change
karny main to koi kalma ni na . bs dil se jo bat achi lagi ke yhi sai lagti
ha ,to un ki man ke bad ma khon ke ma ahle sunnat hon.
ku ke namaz he allah ke nabi(s.a.w)ne nmaz ma mind ma jo was-wasay
aty hen unki mafi ha , aur roza jo bol main tor jata ha us ki mafi ha ku
ke us ke mind ma wo bat hoti ni ha ke es se mera roza tot sakta ha ,
to jab mra mind us waqt deny k liye tayar hi ni tha aur aur talaq ke bary
ma kbi para ya suna hi ni tha ku k koi asa erada hi ni tha jo smj hoti ke
aeik deny ke bad rajo ho skta ha ya 2 ke bad bs ye janta tha ke 3 tlaq ke
bad talaq agla pta hi ni tha ke halala ha ya koi hal es ka us waqt bs 3 ka
pata tha na agy ka pata tha na pichay ga.
HASTHIS sahib>> ma manta hon jis tra khty hen ahle sunnat ke nikha
ke waqt mind ka shi rhna ke ma ne usi ke sath hi rhna he ye zrori ha
agr mind ma ye ni ha to nikha ni sai ,ye bi sbi muft saib khty hen,to phr
jb us waqt mind ma ye bat rakhni ka 3 bar qabool qabool krny se nikha
ni mind ka b set hona lazmi ha , to agr mara mind alaq dety waqt accept
hi ni kr ra tha kisi majbori se de aur es ka ilm bi ni toooooo
>>>phr ap hi ke btaty gy mutabiq tala qni honi chahye.ku ke ye b ahle
sunnat khty hen talaq ka masla aisa sangeen ha agr mind ma ye bi
khyal a jay ke ma n es ko talaq de deni ha to tab bi wo pta ni yad ni
(bahni talaq)mtlib talaq ho jati ha ku ke s ka mind ma tha .
to jab mera man hi ni ra bs lafz ada kar diyay to agr ho gi ,
to hilala ke liye b agr us ka min tasleem kery ya na bs 3 bar qabool krny
se nikha b ho sakta ha ,
>>aur agr allah sab maff kar deta ha to ma ap ki bat tasleem karta hon
halala krna ha to agr orat khalwat na kry to ye khy ke mjy azad krdo ma
tm ko haq-mehar maff karti hon to ye bi to ap ke kisi alam ne kha ha.
aur agr koi galti ho b jay to kia allah se maffi mangny se maff ni kray ga
100 qatil ki bi maffi bs eik bar khny ho jati ha.
>>qaroon jasy kafir ko allah khta ha mj eik bar khta ya allah mjy maff
kar de mosa tum ne itni minton ke bad maff ni kia ,udr allah ko payara
kon tha mosa ke qaroon
qaroon jsy ne allah ke nabi pe itni tuhmat lgai to hazrat mosa ko gusa a
gia to payary to mosa thy allah ko allah ne ye ni kha ke mosa acha kia
ha ye kha mosa mjy se eik bar b maffi mang leta ma n kar dena tha , jo
itna rahim ha qaroon jason ko maff kar ra ha to kia agr ye galti hi ha
lkin anjany mahoi to kia ye ni maff kray ga .agr halala ke bad khalwat
na kry to?
HASTHIS sahib>>>> ap ne jo bi farmaya bilkul sai ha lakin ye bi btain
ke us waqt jo bat nabi pak (s.a.w) ne farmaya us orat ko wo b to ho skta
ha pori 3 talaq ke bad huwa ho jo itny bary time ma bi na smj saka usko
saza deny ke liye farmaya ho.
>> ku ke agr mjy es bat ka pta hota ke 1 ya 2 talaq ke bad rajoo hota he
to saff zahir ha ma ne kbi ni kisi alame deen se pochna tha jab teen
honi hen tabi jaty hen na ku jis ka pata hi ni tha ab kia hona ha
>>to ho sakta ha wo b phly 2 ke bad rajo huwa ho aur 3 jb de us ke bad
pochny k liye ku k ye to pata ha na k 3 ke bad talaq to us tra agr un ki 3
ho gi hon to gay hon ap(s.a.w) ke pass .
HASTHIS sahib>>>> insan ka qatil krna sb se bara guna ha . ke 1 ka
qatil pory insaniyt ka qatil ha mtlib itna bara guna ,
to allah ne to ni kha ke eik ko talaq sary jahan ki talaq ,
jo mar jata ha jo marzi kary marny wala wo qatil hony waly ko wapis nhi
la skta lkn quran ma allah na to us ka qisas rakha ha us ke pichlay agr
maff kar den to mafffi , halan kay jo mara ha kis ka marny ko dil karta
ha takleef to marny waly ko hoi pichly agr koi matalba kar ke maffi de
dein to allah na kha maff ,
>>agr ye sb allah ne dunya ko chalany ke liye kia raha ha qatil ki maffi
to ye be es ma koi asani to ho gi .
>> bri mehrbani apki ke ap mjy ye bata dein sari bat
>>ku ke ma ahle sunnat hon to shak to dil ma par gia ha na to ye ap ne
hi mera dor karna ha , agr ma ne apni man ni hoti to ku asi tension ma
parta phr to saaf usi tra krta jis tra hazrat mosa na qatil ka faisla kia to
wo me sawal pochty thy to khud hi musebt ma phanasty ja ray thy .
>>>ap mjy ye bata den ke halala shi kia ha aur agr karen to ksy sahi
kren jis se hm dono kisi galt fehmi ke duran phr se mil sakin.
>>please ye na jawab de dain ke jo bta diya he , es ka hal wo ni ha ku
ka main janta hon jis ke opar ye sub guzar ni rai hoti usko kisi ke dukh
ke koi parwa ni hoti,please es bat ko serios le jiye .aur hamari help
farma dein .ku ka mjy jab ni es ki parwa thi to ma b kbi talaq waly topic
ke pas taq ni gia ab din rat yi kam he koi behtr hal nikal ay.
>>ap sb ko allah jaza de ga amin!,hamesha ap ko duaon ma yad rakon
ga .
>>aur ye hal please na khin ke eik ahle sunat ke video dekhi to khty
hen ke hal hi koi ni matlib ap chor do aur kar lo ye ta harny ali bat hoi
ku jab quran khta ha agr 3 talaq ho gi to halala kro.
to aglti to muj se hoi aur khin koi aur kar lo agr ma ye khon ka mara dil
ni manta aur wo b ni chahti k agy ho,wo ye saza b bugtny ke liye tayar
ha,matlib galti ma ne ki aur saza usko wo b insan ha us ka b dil h.agr ye
ha k us ko allah jaza de ga ,to agr ma us ka dukhi dil dekh ke sab kron
to kia allah mjy na maff kry ga ,
bs ho gi kisi majbori ma ab kbi ni hogi ku ka lailmi ma sb huwa , ma agy
bi kar sakta hon lkn itna duki hon ke allah ke samny ksy moun
dekhaon ga ke ma ne talaq de ha ,ye janta tha guna hota ha ,bs pta ni
khud samj ni ati ho ksy gia ha sb , ma pahly nmaz parta tha tahajid ma
3,4 ganty guzarta tha us din ka 14, ho gy hen nmaz tak ni parny gia ke
allah ke pas ja ke usko kia mou dekhaon ka ye kam kar ke aya hon.
>>ap ye b bta skty hen ab mjy larki ke ami se pata chala he ke un ke
rishty dar us ka rishta mangty thy to ni deya to wo abi b jan ni chor ray
thy , to lagta he asy achanik sab thek se eik din ma sara ksy galt ho gia
ke ajkal log bra galt karty hen k kin se jado wagiro to ni karwaya ,ab jab
tot gia ha wo phr pichay pary hen , lkn hm me se na wife kuch aisa
chahti ha.mjy bi abi sari bat btai ha unhon na,
>>bs app mehrbani famain ,aur allah bi jorny walon ko pasand karta ha
koi aisi tadbeer batin jis ma hum shareyat ke mutabiq phr se toba kar k
apni life shoro kr skain. aur eik maslim ma ho ke itni itni faraq wali
batin ,mera to wasy hi damag pagal ho gia ha,jo m ni bta saka,
>>>apki bri meharbani ho gi,

Activist Group: Members  Joined: 04th Feb, 2012  Topic: 12  Post: 370  Age:  27  
Posted on:15th Jan 2017, 12:45pm
 

Talaq

AOA Bhai,

Talaq aik sensitive matter hai. hmare han ye bohat buri baat hai k shadi kr dete hain. na sex education dete hai na talak ka btate hain. ab ap jese mushkil me hain aksar log aise phas jate hain. mujhay bht khushi hui k ap bs man pasand cheez ko nai dekh rhay dosra angle b dekh rhay ho. aksar log man pasnd fatwa lete hain or bs g mamla khatm.

mera ap ko ye hi mashwara hai k ap ka jo bhi firqa hai us k mufti se milain. usay apne exact words btaye k mene ph pe ye kaha tha. kya ye talaak hai? us k mutabik faislaa le.

hr firqa dosre firqay k opposite hain or amoman aik dosre ko galiyaa hi de rhay hote hain. to ap in ki laraiyo me na pare. ap jis b firqay se taluk rkhte hain bs us k mufti se ja k fatwa le. phir jo fatwa ho us pe amal kre

For More Detail Click On Page No: 1
 
 
 
Pakistani Singer In UK  How to find job with no work experience  Indian Students Dance In USA

Warning :The information presented in this web site is not intended as a substitute for medical care. Please talk with your healthcare provider about any information you get from this web site.
© Copyright 2003-2017 www.noorclinic.com, All Rights Reserved Contact Us